.

نیس کی سڑکیں جنونی ٹرک ڈرائیور نے فرانسیسیوں کے خون سے رنگیں کر دیں

قومی دن پر آتش بازی کا مظاہرہ دیکھنے والے 73 افراد لقمہ اجل بن گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس کےساحلی شہرنیس میں ایک شخص نےٹرک ہجوم سےٹکرا دیا۔ فرانسیسی حکام کا کہنا ہےکہ ٹرک سےکچل کر 73 افراد ہلاک اور 150 زخمی ہو گئے ہیں۔ فرانسیسی حکام نے واقعے کو 'دہشت گردی' قرار دے دیا ہے۔

فرانس کےقومی دن کا جشن منانےکے لیے لوگ بڑی تعدادمیں جمع تھے۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی کے ایک نامہ نگار کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ آتش بازی کے مظاہرے کے اختتام کے دوران پیش آیا۔

عینی شاہدین کے مطابق ٹرک سے کچلنے والے شخص نے فائرنگ بھی کی جسے پولیس نے جوابی کارروائی میں ہلاک کردیا۔

مقامی علاقے میں لوگوں سے کہا گیا ہے کہ وہ گھروں کے اندر رہیں کیونکہ ’حملہ‘ ہوا ہے۔کچھ اطلاعات کے مطابق پولیس اور ٹرک کے اندر بیٹھے ہوئے افراد کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا لیکن اس کی تصدیق نہیں ہو سکی۔

نیس کے میئر کرسچن سٹراسی نے کہا ’ٹرک ڈرائیور نے بظاہر درجنوں افراد کو ہلاک کر دیا ہے۔‘

صدارتی آفس کے مطابق واقعے کے بعد صدر فرانسوا اولاند جنوبی شہرایوگنان سے پیرس پہنچ رہے ہیں۔ صدر اولاند کرائسس سیل میں واقعے سےمتعلق اجلاس کی صدارت کریں گے۔

واضح رہے کہ ا س سال جنوری میں پیرس حملوں کے بعد فرانس میں ایمرجنسی نافذ ہے، فرانسیسی صدرنے 26 جولائی کو ایمرجنسی اٹھانے کااعلان کیا تھا۔

ادھر وائٹ ہاؤس کے مطابق امریکی صدر باراک اوباما کو نیس واقعے پربریفنگ دی گئی۔ صدر براک اوباما کو نیشنل سیکورٹی ٹیم بدلتی صورتحال سے آگاہ کرے گی۔