.

داعش نے نیس میں ٹرک حملے کی ذمے داری قبول کر لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق اور شام میں برسرپیکار سخت گیر جنگجو گروپ داعش نے فرانس کے شہر نیس میں ٹرک حملے کی ذمے داری قبول کر لی ہے۔فرانس کے قومی دن کے موقع پر اس حملے میں چوراسی افراد ہلاک اور ایک سو سے زیادہ زخمی ہوگئے تھے۔ان میں پچاس کی حالت تشویش ناک بتائی جاتی ہے۔

داعش سے وابستہ نیوز ایجنسی اعماق نے ہفتے کے روز اطلاع دی ہے کہ ''جنگجو گروپ کے ایک فوجی نے جمعرات کی شب نیس میں خون یہ ہولی کھیلی تھی اور اس نے داعش کے خلاف لڑنے والے اتحادی ممالک پر حملوں کی اپیل کے جواب میں فرانسیسی شہریوں کو ٹرک تلے کچل کر ہلاک کیا تھا''۔

نیس میں قومی دن کی تقریب میں شریک فرانسیسی شہریوں پر تیز رفتار ٹرک چڑھانے والا ڈرائیور محمد لحويج بوہلال تیونسی نژاد فرانسیسی شہری تھا۔اس نے لوگوں پر فائرنگ بھی کی تھی بعد میں پولیس نے اس کو فائرنگ کرکے ہلاک کردیا تھا۔وہ تیونس کے شہر سوسہ کے نواحی علاقے مساکن میں 31 جنوری 1985ء کو پیدا ہوا تھا۔اس کی نیس ہی میں تیونسی نژاد ایک فرانسیسی خاتون سے شادی ہوئی تھی۔ان کے تین بچے ہیں۔

فرانس کے ایک عدالتی ذریعے نے بتایا ہے کہ حملہ آور بوہلال سے تعلق کے الزام میں چار افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ان میں سے ایک کو جمعے کو اور تین کو ہفتے کی صبح گرفتار کیا گیا ہے۔اس ڈرائیور کی بیوی بھی پولیس کی حراست میں ہےاور اس سے پوچھ تاچھ کی جارہی ہے۔