.

ترکی : سپریم کورٹ کے 5 اہل کار علاحدہ ، 2700 جج برطرف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی میں حکام نے ہفتے کے روز سپریم کورٹ کے 5 ارکان کوعلاحدہ کرنے کے ساتھ ساتھ 2745 ججوں کو برطرف کردیا۔ یہ کارروائی انقلاب کی ناکام کوشش کے بعد عمل میں آئی ہے۔ اس کے علاوہ انتظامی قانون کی عدالت کے 10 اہل کاروں کو بھی گرفتار کرلیا گیا ہے جب کہ کورٹ آف کیسیشن کے 140 اہل کاروں کی تلاش جاری ہے۔

سپریم کورٹ کے سربراہ کا کہنا ہے کہ انقلاب کی کوشش میں شریک ہونے والوں کے خلاف عدالتی کارروائی جلد از جلد کی جائے گی۔

ترک وزیراعظم بن علی یلدریم نے ہفتے کے روز اعلان کیا کہ جمہوری حکومت کا تختہ الٹنے کی کوشش کے دوران 104 انقلابی ہلاک اور 1440 زخمی ہوئے جب کہ سیکورٹی فورسز نے اس ناکام کوشش میں ملوث 2839 فوجیوں کو گرفتار کرلیا۔

ادھر ترکی کی پولیس نے وزیر داخلہ افکان علی کے حکم پر 5 جنرلوں اور 29 کرنلوں کو ان کی ذمہ داریوں سے سبک دوش کردیا ہے۔

اس کے علاوہ میرینز بریگیڈ کے کمانڈر ایڈمرل خليل إبراهيم يلدز، کمانڈوز بریگیڈ کے کمانڈر جنرل يونس كوتامان اور کمانڈوز بریگیڈ 2 کے کمانڈر جنرل اسماعيل گونی شارکو انقلاب کی کوشش کی تحقیقات کے سلسلے میں حراست میں لیا گیا ہے۔

ترکی کے حکام نے ازمیر میں ترکی کی فوج کے کمانڈر اور تھرڈ چیف آف اسٹاف کرم جاگلر کو بھی گرفتار کیا ہے۔ حکام کے مطابق فوج سے انقلابی عناصر کو پاک کرنے کے لیے گرفتاریوں کا سلسلہ جاری ہے۔