ایردوآن کو اس طرح گرفتار کیا جانا تھا !

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ترکی میں انقلاب کی کوشش میں ملوث فوجی اہل کاروں نے ازمیر صوبے میں تحقیقات کے دوران ترک صدر رجب طیب ایردوآن کی گرفتاری کے منصوبے کا انکشاف کیا ہے۔ سیکورٹی ذرائع کے مطابق فوجیوں اہل کاروں نے بتایا کہ انہیں یہ احکامات ملے تھے کہ ایردوآن چھٹیاں گزارنے اپنے اہل خانہ کے ساتھ مارماریس کے جنوب مغرب میں جس ہوٹل میں مقیم ہیں ، اُس پر حملے کے دوران ایک اہم دہشت گرد شخصیت کو گرفتار کیا جانا ہے۔

ترک اخبار "حُريت" کے مطابق ترک صدر کو حراست میں لینے کے لیے ایک فضائی اڈے سے چالیس تربیت یافتہ فوجی روانہ ہوئے تھے۔

اخبار کا کہنا ہے کہ کارروائی کے دوران صدر ایردوآن کے محافظین میں سے دو محافظ فوجی اہل کاروں کے ہاتھوں ہلاک ہوگئے۔

ذرائع نے بتایا کہ حملے کے ناکامی سے دوچار ہونے کے بعد متعدد فوجی اہل کار علاقے میں واقع جنگل کی طرف فرار ہو گئے۔

واضح رہے کہ ایردوآن نے اس سے قبل "سی این این" کو دیے گئے بیان میں کہا تھا کہ اگر وہ ہوٹل میں 10 سے 15 منٹ رکے رہتے تو قتل کر دیے جاتے یا گرفتار ہوجاتے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں