جنوبی قصبے میں دھماکا نہیں ہوا،سوٹ کیس پھٹا ہے: جرمن پولیس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

جرمن ریاست بویریا کی پولیس نے کہا ہے کہ جنوبی شہر نورمبرگ کے نزدیک واقع قصبے زرنڈرف میں تارکین وطن کے لیے مخصوص ایک دفتر کے باہر دھماکا نہیں ہوا ہے بلکہ ایک سوٹ کیس پھٹا ہے اور اس سے کسی قسم کا کوئی خطرہ نہیں ہے۔

پولیس نے اپنے سرکاری ٹویٹر اکاؤنٹ پر لکھا ہے کہ ''کوئی دھماکا ہوا ہے اور نہ کوئی شخص زخمی ہوا ہے''۔پولیس نے ایک اور بیان میں کہا ہے کہ سوٹ کیس میں ایک سپرے کین تھا اور شاید وہی پھٹا ہے ۔اب اس سوٹ کیس کے مالک کی تلاش کی جارہی ہے۔

قبل ازیں ایک جرمن ٹیلی ویژن نے اپنی ویب سائٹ پر اطلاع دی تھی کہ دھماکا خیز مواد سے بھرے ایک سوٹ کیس کو اڑایا گیا ہے۔اس واقعے کے بعد قصبے میں مہاجرین کے ایک اقامتی مرکز اور پناہ گزینوں سے متعلق امور کے ذمے دار دفتر کے باہر پولیس اہلکار تعینات کردیے گَئے ہیں۔

نورمبرگ کا یہ علاقہ بویریا کی شمالی سرحد کے نزدیک واقع ہے۔اس ریاست میں داعش نے گذشتہ دس روز کے دوران دو حملوں کی ذمے داری قبول کی ہے۔منگل کے روز جرمن دارالحکومت برلن کے جنوب مغربی علاقے اسٹیجلٹز میں ایک مسلح شخص نے یونیورسٹی کے کلینک میں ایک ڈاکٹر پر فائرنگ کردی تھی اور پھر خود کو گولی مار کر ہلاک کر لیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں