ترکی: ایردوآن کے ہوٹل پر "دھاوا" بولنے والے فوجی گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ترکی میں سکیورٹی فورسز نے اتوار کی شام 10 فوجیوں کو گرفتار کر لیا ہے۔ یہ فوجی موغلا صوبے کے شہر مرمریس میں اُس ہوٹل پر دھاوے میں شریک تھے جہاں ترک صدر رجب طیب ایردوآن ٹھہرے ہوئے تھے۔ ہوٹل پر مذکورہ حملہ 15 جولائی کو ملک میں فوجی انقلاب کی ناکام کوشش کی رات کیا گیا۔

ایک ترک نیوز ایجنسی کے مطابق موغلا صوبے میں واقع "اولا" قصبے کے باسیوں نے متعلقہ حکام کو 5 فوجیوں کے دیکھے جانے کی اطلاع دی۔ اس بنیاد پر حکام نے اسپیشل یونٹ کی ٹیم کو مذکورہ علاقے میں بھیجا۔ اسپیشل یونٹ کے پہنچنے کے فوری بعد مفرور باغی فوجیوں کے ساتھ اس کی جھڑپ شروع ہو گئی۔ بعد ازاں حکام نے ایک فوجی ہیلی کاپٹر کو جھڑپ کے مقام پر بھیجا اور صحافیوں اور شہریوں کو وہاں سے دور کر دیا۔

کارروائی کے دوران سیکورٹی فورسز نے باغی فوجیوں سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ خود کو حوالے کر دیں جس کے بعد ان میں 10 کو پکڑ لیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں