متوفی باپ کا دل بیٹی کی شادی کے روز بھی دھڑکتا رہا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عام طور باپ اپنی بیٹی کی شادی کے دن کا منتظر ہوتا ہے تاکہ اس روز وہ اپنے لخت جگر کو اس کے شوہر کے حوالے کرے اور اس کا دل اس نئے جوڑے کے لیے مسرت کے جذبات سے دھڑکے۔ اسی طرح ہر لڑکی کو اس دن کا انتظار ہوتا ہے کہ وہ اپنے باپ کے ہاتھوں اپنے شوہر کے حوالے کی جائے۔

تاہم مائیکل اسٹیپن اپنی بیٹی کی شادی کا منظر دیکھنے کے لیے اس دنیا میں نہیں رہا۔ اسے اپنی بیٹی جینی کی شادی سے 10 برس قبل قتل کر دیا گیا تھا۔

امریکی چینل سی این این کے مطابق اس کے باوجود مائیکل کا دل جینی کی شادی کے دن بھی دھڑک رہا تھا۔ وہ اس طرح کہ مائیکل کا دل اس کی ہلاکت کے بعد عطیے کے طور کامیابی کے ساتھ ایک مریض سینے میں لگا دیا گیا تھا۔

اپنے سینے میں مائیکل اسٹیپن کا دل رکھنے والے آرتھر تھامس نے حقیقتا جینی کی شادی کی تقریب میں شرکت کی.. اور نہ صرف شرکت کی بلکہ دلہن کو دولہا کے حوالے بھی کیا۔

یاد رہے کہ گزشتہ دس سالوں سے اسٹیپن اور تھامس کے خاندان رابطے میں ہیں اور اس دوران کے درمیان فون کالز ، خطوط اور تحفوں کا تبادلہ بھی جاری رہا۔ جینی نے خصوصی پیغام کے ذریعے آرتھر سے اپنی شادی کی تقریب میں شریک ہونے کی درخواست کی تھی۔

آرتھر تھامس کے مطابق یہ ان کے لیے "اعزاز" کی بات ہے کہ وہ اس شخص کی بیٹی کو رخصت کریں جس کا دل ان کو عطیہ کیا گیا۔

جینی کی بہن میشیل کا کہنا تھا کہ " جس وقت میں ان (آرتھر) کے سینے سے لگی تو مجھے ایسا محسوس ہوا کہ میں پھر سے اپنے والد کے قریب ہوں ، یہ اس جیسے دن کے موقع پر ایک شان دار تجربہ تھا۔ مجھے اسی کی ضرورت بھی تھی"۔

دلہن جینی نے اپنی شادی کے روز کہا کہ " اب یہاں پورا خاندان ہے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں