فرانس : دہشت گردی کے حملوں کی سازش کے الزام میں تین گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فرانس میں اس ماہ کے دوران دہشت گردی کے نیٹ ورکس کے ساتھ تعلق کے الزام میں سات افراد کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔ان میں سے تین دہشت گردی کے حملوں کی سازش کررہے تھے۔

فرانسیسی وزیر داخلہ برنارڈ کازینوف نے منگل کے روز ایک نیوز کانفرنس میں بتایا ہے کہ پولیس نے 2016ء کی پہلی ششماہی کے دوران دہشت گردی سے تعلق کے الزام میں اتنے زیادہ مشتبہ افراد کو گرفتار کیا ہے، جتنے گذشتہ پورے سال کے دوران گرفتار کیے گئے تھے۔البتہ انھوں نے ان گرفتاریوں کی تفصیل نہیں بتائی ہے۔

فرانسیسی پولیس نے 8 اگست کو پیرس کے نواحی علاقے میلون سے تعلق رکھنے والی ایک سولہ سالہ لڑکی کو گرفتار کیا تھا اور اس کو دہشت گردی کے حملے کی منصوبہ بندی کے الزام میں حفاظتی تحویل میں لے لیا تھا۔یہ لڑکی ٹیلی گرام پر ایک گروپ کی منتظمہ تھی اور اسی کے ذریعے جولائی میں نارمنڈی میں پادری کو قتل کرنے والے دو انتہا پسندوں نے حملے کی منصوبہ بندی کی تھی۔

تفتیش کاروں کے مطابق اس نے داعش کے پروپیگنڈا پر مبنی متعدد پیغامات جاری کیے تھے اور ان میں حملوں کی ترغیب دی گئی تھی۔اس نے خود بھی ایک کارروائی کرنے کی خواہش کا اظہار کیا تھا۔

کازینوف اور جرمن وزیر داخلہ تھامس ڈی میزائرے نے اس مشترکہ نیوز کانفرنس میں یورپی کمیشن سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ٹیلی گرام ایسی پیغام رسانی کی سروسز کو چلانے والوں کے خلاف قانونی اقدامات کے بارے میں غور کرے تاکہ ان کے ذریعے دہشت گردی کی ترغیب دینے والوں کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی جاسکے۔

درایں اثناء فرانس کی ایک عدالت نے نیس سے تعلق رکھنے والے ایک انیس سالہ نومسلم کو دہشت گردی کو تقدیس کا جامہ پہنانے کے الزام میں قصور وار قرار دے کر تین سال قید کی سزا سنائی ہے۔اس پر الزام تھا کہ وہ انتہاپسندوں کی ویب سائٹس کو باقاعدگی سے دیکھا کرتا تھا اور قابل اعتراض تبصرے اور تصاویر پوسٹ کیا کرتا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں