.

تیونسی دو شیزہ عمر قید کے مجرم کو دل دے بیٹھی

گمنام معشوقہ کی جیل میں محبوب سے شادی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس کے سوشل میڈیا پر ان دنوں ایک گرما گرم خبر گردش کررہی ہے۔ یہ خبر کسی بم دھماکے یا سیاسی خلفشار کی نہیں بلکہ ایک تیونسی نژاد اطالوی خاتون کی ہے جس نے عمر قید کے سزا یافتہ مجرم کے ساتھ شادی کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق شمالی تیونس کے بنزرت شہر میں قائم الناظور نامی جیل میں ایک تیونسی شہری اپنی منگیتر کو قتل کرنے کے جرم میں قید ہے۔ شروع میں اسے قتل کے جرم میں سزائے موت سنائی گئی تھی تاہم بعدازاں سزا میں نرمی کرکے اسے عمر قید میں تبدیل کردیاگیا تھا۔

ایک سال قبل مقامی ٹی وی چینل پر قیدی کے حوالے سے ایک رپورٹ نشر کی گئی جس میں اس نے اپنے کیے پر سخت شرمندی کا اظہار کیا اور جیل سے جلد از جلد نکلنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ اس کی یہ رپورٹ اٹلی میں مقیم ایک تیونسی دوشیزہ بھی دیکھ رہی تھی۔ وہ قیدی سے بے حد متاثر ہوئی اور اس سے رابطے کے لیے اس نے قیدی کے وکیل منیر بن صالحہ سے رابطہ کیا۔

منیر بن صالحہ نئ ’’موزابیک‘‘ ریڈیو کو بتایا کہ اٹلی میں مقیم خاتون نے بتایا کہ وہ جیل میں فلاں قیدی سے ملاقات کی خواہش مند ہے۔ خاتون اور اس کے قیدی شوہر کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی۔ تیونسی لڑکی نے نہ صرف قیدی سے ملاقات کا فیصلہ کیا بلکہ اس کے ساتھ شادی کی بھی تجویز پیش کردی۔

بن صالحہ نے بتایا کہ شادی کی خواہش مند خاتون کی قیدی کے ساتھ ملاقات کا اہتمام کرایا گیا۔ دونوں نے ایک دوسرے کو شادی کے لیے تجویز کیا اور آخر کار دونوں رواں ماہ اگست میں جیل ہی میں رشتہ ازدواج میں منسلک ہوگئے ہیں۔ اٹلی میں مقیم تیونسی خاتون ایک کاروباری شخصیت ہیں۔