.

چین، سعودی عرب میں باہمی تعاون کے دسیوں معاہدے طے پا گئے

شہزادہ محمد کی چینی نائب وزیر اعظم سمیت اہم رہ نماؤں سے ملاقاتیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے نائب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز کے دورہ چین کے دوران دونوں ملکوں نے کئی شعبوں میں دوطرفہ تعاون کے دسیوں معاہدوں پر دستخط کئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق شہزادہ محمد بن سلمان نے چینی نائب وزیر اعظم ژانگ جے لی [Zhang Gaoli] سے بیجنگ میں ملاقات کی۔ اس موقع پر چین۔ سعودی عرب مشترکہ کمیٹی کے قیام کے ساتھ ساتھ کمیٹی کے پہلے سیشن کی کارروائی پر بھی اتفاق کیا گیا۔

سعودی ولی عہد اور چینی نائب وزیر اعظم کے درمیان ملاقات کے بعد 15 سمجھوتوں کی منظوری دی گئی۔ بیجنگ اور ریاض مین طے پائی دو طرفہ یاداشتوں توانائی، خوردنی تیل کی اسٹوریج، کانوں کی کھدائی اور تجارت خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

اس کے علاوہ سعودی عرب کی وزارت ہاؤسنگ نے چین کے اصفر کے علاقے میں نئے شہر کی تعمیر میں تعاون کے معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ شاہراہ ریشم انفارمیشن معاہدے کی منظوری دی گئی۔ چین کی وزارت سائنس وٹکنالوجی اور سعودی عرب کے شاہ عبدالعزیز سائنس ٹکنالوجی سٹی کے درمیان سائنسی شعبے میں باہمی تعاون کی متعدد یاد داشتوں کی منظوری دی گئی۔ اس ضمن میں آبی وسائل سے استفادے کے لیے دونوں ملکوں کا ایک دوسرے کے ساتھ تعاون خصوصی اہمیت کا حامل ہے۔

محمد بن سلمان کے دورہ چین کے پہلے روز 9 معاہدوں کی منظوری دی گئی۔ ان میں اقتصادی بیشتر سمجھوتے اقتصادی اور تجارتی شعبے سے متعلق ہیں۔ نمایاں معاہدوں میں سعودی عرب کے ایوان صنعت وتجارت اور چین کے عالمی تجارتی مرکز کے درمیان تجارت کے فروغ کا معاہدہ شامل ہے۔

اس موقع پر عجلان اینڈ برادر گروپ آف کمپنیز چین کے زاورنگ شہر میں ڈیڑھ ارب یوآن کے توسیعی اور تعمیراتی منصوبے کی منظوری دی گئی۔ الجبر ہولڈنگ اور Hair کمپنی کے درمیان گھریلو الیکٹرانک مصنوعات کی تیاری کا معاہدہ طے پایا۔ الرامز انٹرنیشنل اور ٹاپ ٹرانس گروپ کے درمیان باہمی تعاون کی یاد داشت منظور کی گئی۔

شہزادہ محمد بن سلمان کے دورہ چین کے دوران الفا انڈسٹریز برائے فیڈ اور Jintan اور الجمیح کمپنی برائے تونائی کا چین کی CGN کمپنی کے ساتھ باہمی تعاون کا معاہدہ ہوا۔ الجریسی گروپ اور ZTE اور الجریسی گروپ کا Huawei کے درمیان بھی معاہدہ ہوا۔ سدا بزنس سینٹر اور Credit International کے درمیان معاہدے کے وقت بھی شہزادہ سلمان اور چین کے نائب وزیر اعظم موجود تھے۔