.

یمنی ملیشیا کا سعودی عرب کی جانب چلایا گیا میزائل فضا میں تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی قیادت میں اتحاد نے یمن کے شمالی علاقے میں موجود حوثی ملیشیا کی جانب سے ایک سعودی ائیربیس کی جانب چلایا گیا میزائل مار گرایا ہے۔

سوموار کے روز فضا میں تباہ کیا گیا یہ میزائل سعودی عرب کے شہر خمیس مشیط کی جانب داغا گیا تھا جہاں ایک بڑا فوجی فضائی اڈا واقع ہے۔سعودی عرب نے یمن کے ساتھ واقع اپنے سرحدی علاقے میں بیلسٹک میزائلوں کو فضا ہی میں ناکارہ بنانے کے لیے پیٹریاٹ میزائل بیٹریز نصب کررکھی ہیں۔

اس میزائل کا ہدف یمن کی سرحد سے قریباً ایک سو کلومیٹر دور واقع شاہ خالد ائیربیس تھا۔یہ ائیربیس خمیس مشیط شہر کے نزدیک ہی واقع ہے اور یہیں سے سعودی عرب کی قیادت میں اتحاد کے لڑاکا طیارے اڑ کر یمن میں حوثی شیعہ باغیوں اور سابق صدر علی عبداللہ صالح کے وفادار فوجیوں کے ٹھکانوں پر بمباری کررہے ہیں۔

یمن میں جاری لڑائی کے دوران گذشتہ مہینوں میں بھی حوثی شیعہ باغی سعودی عرب کی سرحد کے ساتھ واقع جنوبی علاقے میں متعدد مرتبہ بیلسٹک میزائل فائر کر چکے ہیں۔انھوں نے سعودی عرب کے سرحدی شہر نجران کی جانب متعدد مرتبہ کاتیوشا راکٹ بھی فائر کیے ہیں۔

واضح رہے کہ 6 اگست کو کویت میں اقوام متحدہ کی ثالثی میں جنگ بندی کے لیے مذاکرات کے خاتمے کے بعد سے یمن میں لڑائی میں شدت آئی ہے۔

سعودی عرب کے سرحدی علاقے میں گذشتہ سال مارچ سے حوثی شیعہ باغیوں کے ساتھ جھڑپوں اور ان کی گولہ باری سے ایک سو سے زیادہ شہری اور فوجی جاں بحق ہوچکے ہیں۔

سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد کے لڑاکا طیارے مارچ 2015ء سے یمن میں حوثی شیعہ باغیوں کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کررہے ہیں جبکہ یمن کے شمالی علاقے میں موجود حوثی باغی سرحد پار سعودی آبادی اور سکیورٹی فورسز کی جانب گولہ باری کرتے رہتے ہیں۔ اقوام متحدہ کے فراہم کردہ اعداد وشمار کے مطابق یمن میں جاری لڑائی میں چھے ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ان میں نصف سے زیادہ عام شہری ہیں۔