.

بھارتی کشمیر کے بریگیڈ ہیڈکوارٹر پر حملہ، 17 فوجی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر میں بھارتی فوج کے بریگیڈ ہیڈکوارٹر پر حملے کے نتیجے میں17 فوجی ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔ بھارتی میڈیا نے ہلاکتوں کی تصدیق کردی ہے جبکہ تمام حملہ آوروں کو بھی مار دیا گیا ہے۔

بھارتی وزیر داخلہ نے روس اور امریکا کا دورہ منسوخ کر دیا ہے۔ ادھر بھارتی جنتا پارٹی نے کٹھ پتلی حکومت کی برطرفی کا مطالبہ کردیا ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق علی الصباح ساڑھے پانچ بجے مسلح افراد نے بھارتی فوج کے بارہویں بریگیڈ ہیڈکوارٹرز میں داخل ہو کرفائرنگ شروع کردی۔ بھارتی فوجی ہیڈکوارٹر سری نگر مظفر آباد ہائی وے پرلائن آف کنٹرول کے قریب قائم ہے، جہاں سیکیورٹی انتہائی سخت ہوتی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق مقبوضہ کشمیر کےعلاقے بارہ مولا کے اڑی سیکٹر میں مسلح افراد نے بریگیڈ ہیڈکوارٹر پر اتوار کو حملہ کیا۔ فائرنگ اور دھماکے کے باعث کئی بیرکوں میں آگ لگ گئی۔ حملے میں 17 بھارتی فوجی ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔ زخمیوں کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے اسپتال منتقل کیا گیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بریگیڈ ہیڈکوارٹر پر حملے کرنے والوں کی تعداد 4 ہے۔ کارروائی کے بعد تمام حملہ آوروں کو مار دیا گیا ہے۔

بھارتی فوجی ترجمان کے مطابق مسلح افراد نے سب سے پہلے انفنٹری بٹالین کے اڈے کو نشانہ بنایا اور شدید فائرنگ کی۔ مسلح افراد اور سیکورٹی فورسز کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ کئی گھنٹے جاری رہا۔ ہیلی کاپٹروں کے ذریعے علاقے کی فضائی نگرانی کی جاتی رہی۔

دوسری جانب مقبوضہ کشمیر کی صورتحال اور اڑی سیکٹر حملے کے بعد بھارتی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے روس اور امریکا کا دورہ منسوخ کردیا ہے۔

واضح رہے کہ آٹھ جولائی کو بھارتی فوج کی بربریت سے کمانڈرحزب المجاہدین برہان وانی کی شہادت کے بعد سے مقبوضہ کشمیر میں حالات کشیدہ اور کرفیو نافذ ہے۔ چند روز قبل کرفیو ہٹانے کے بعد دوبارہ نافذ کر دیا گیا تھا۔ اس دوران بھارتی فوج کے ہاتھوں شہید کشمیریوں کی تعداد نوے سے زائد ہو چکی ہے۔ تشدد سے زخمی کشمیریوں کی تعداد بھی ہزاروں میں ہے۔