بین کی مون کا انتقالِ آبادی روکنے کے لیے اقدامات کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سوموار کو اعلیٰ سطح کے ایک اجلاس میں مہاجرین اور تارکین وطن کی بڑے پیمانے پر نقل وحرکت کو روکنے کے لیے اقدامات پر غور کیا گیا ہے۔

اس موقع پر اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بین کی مون نے کہا کہ یہ اجلاس انسانی انتقال پذیری سے درپیش چیلنجز سے نمٹنے کے لیے کوششوں کے ضمن میں ایک نمایاں پیش رفت کا حامل ہے۔انھوں نے دنیا میں انتقالِ آبادی روکنے کے لیے اقدامات کا مطالبہ کیا ہے۔

اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین فلپو گرانڈی نے کہا کہ دنیا جبری بے دخلی کی روک تھام کے لیے نتیجہ خیز عملی اقدامات کا مطالبہ کررہی ہے۔

عالمی لیڈروں نے اجلاس میں آج ایک اعلامیے کی بھی منظوری دی ہے جس میں دوسری عالمی جنگ کے بعد سب سے زیادہ تعداد میں بے گھر ہونے والے مہاجرین اور تارکین وطن کے بحران سے نمٹنے کے لیے مزید مربوط اور انسانی ردعمل کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔

دنیا کے ایک سو ترانوے رکن ممالک پر مشتمل جنرل اسمبلی کے اس سالانہ اجلاس کے ایجنڈے میں اس وقت چھے کروڑ تریپن لاکھ بے گھر افراد کا مسئلہ سرفہرست ہے اور توقع ہے کہ اجلاس میں شرکت کرنے والے سربراہان ریاست وحکومت مہاجرین اور تارکین وطن کے بحران پر قابو پانے کے لیے اقدامات پر غور کریں گے اور اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے تجاویز پیش کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں