برازیل: 200 قیدی جیل توڑ کر کیسےفرار ہوئے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

برازیل میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک کی ایک بڑی جیل سے 200 قیدی جیل توڑ کر فرار ہوگئے تاہم پولیس کی فوری کارروائی کے بعد فرار ہونے والے نصف قیدیوں کو دوبارہ گرفتار کرلیا گیا ہے۔

خبر رساں اداروں نے برازیلی حکومتی عہدیداروں کے حوالے سے بتایا ہے کہ ملک کے سب سے بڑے شہر ساؤ پاؤلو سے شمال مغرب میں 160 کلو میٹر دور قائم ’’جارڈینوپولیس‘‘ جیل میں سیکڑوں قیدیوں نے اس وقت بغات کردی ہے جب علی الصباح معمول کے مطابق قیدیوں کی گنتی کا عمل جاری تھا۔ اس دوران قیدیوں نے جیل میں آگ لگائی اور بد نظمی پھیلاتے ہوئے جیل کی بیرونی دیوار پھلانگنے کے بعد چار میٹر بلند خار دار تار کی باڑ کاٹ کر فرار ہوگئے۔ کچھ قیدیوں کو جیل کے قریب ہی واقع گنے کے کھیتوں سے دوبارہ گرفتار کرلیا گیا ہے۔

یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ قیدیوں کے فرار کی کوشش کے دوران اس میں کوئی جانی نقصان بھی ہوا ہے یا نہیں۔

ساؤپاؤلو جیل حکام کا کہنا ہے کہ فرار ہونے والے آدھے قیدیوں کو قریبی کھیتوں اور دریا کے کنارے سے گرفتار کیا گیا ہے۔

ایک مقامی اخبار نے جیل کے ایک عہدیدارکا بیان نقل کیا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ ایک ہزار قیدیوں کی گنجائش والی جیل میں 1800 افراد کو قید کیا گیا تھا۔ حکام علی الصباح قیدیوں کی گنتی کررہے تھے کہ انہوں نے بغاوت کردی۔

حکام نے جیل میں ڈالے گئے افراد کے جرائم سے متعلق کسی قسم کے تبصرے سے انکار کیا ہے۔ خیال رہے کہ برازیل جیلوں میں بغاوت کے حوالے سے پہلے بھی بدنا رہا ہے۔ انسانی حقوق کی تنظیمیں بھی برازیلی جیلوں میں قیدیوں سے ناروا سلوک کی بناء پر برازیلی حکومت کو تنقید کا نشانہ بنا چکی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں