.

ترکی : جنوب مشرقی علاقے میں بم دھماکا ،18 افراد ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کے جنوب مشرقی صوبے ہاکاری میں فوج کی ایک چوکی پر کار بم حملے میں نو فوجیوں سمیت اٹھارہ افراد ہلاک اور چھبیس زخمی ہوگئے ہیں۔

ترک حکام کے مطابق کار بم دھماکا صوبے ہاکاری کے شہر شمدينلی سے بیس کلومیٹر دور واقع پہاڑی علاقے پر دوراک جنڈرمیری سکیورٹی فورسز کے اسٹیشن کے باہر ہوا ہے۔یہ علاقہ عراق اور ایران کی سرحد کے نزدیک واقع ہے جہاں کالعدم علاحدگی پسند گروپ کردستان ورکرز پارٹی ( پی کے کے) کے جنگجو فعال ہیں اور وہ آئے دن ترک سکیورٹی فورسز پر بم حملے کرتے رہتے ہیں۔

ترکی کی نجی خبررساں ایجنسی دوغان نے اطلاع دی ہے کہ پولیس اسٹیشن کے سامنے شاہراہ پر گاڑیوں کی جب تلاشی لی جارہی تھی تو اس وقت بارود سے بھری گاڑی کو دھماکے سے اڑا دیا گیا ہے۔ زخمیوں میں دس فوجی بھی شامل ہیں۔

واضح رہے کہ ترکی میں گذشتہ سوا ایک سال کے دوران کرد باغیوں کی پی کے کے اور داعش گروپ کے جنگجوؤں نے متعدد بم دھماکے کیے ہیں جن کے نتیجے میں سیکڑوں ترک شہری ہلاک اور سیکڑوں ہی زخمی ہوچکے ہیں۔

پی کے کے 1984ء سے ترکی کے جنوب مشرقی علاقوں کی خود مختاری کے لیے مسلح تحریک چلا رہی ہے۔ اس لڑائی میں گذشتہ تین عشروں سے زیادہ عرصے میں چالیس اور پچاس ہزار کے درمیان افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ پی کے کے نے گذشتہ سال جون میں ترک حکومت کے ساتھ دو سالہ جنگ بندی کے خاتمے کے بعد دوبارہ حملے شروع کردیے تھے۔ترکی اور اس کے مغربی اتحادیوں امریکا اور یورپی یونین نے پی کے کے کو ایک دہشت گرد گروپ قرار دے رکھا ہے۔