ایران دنیا بھر میں شیعہ ملیشیاؤں کو اسلحہ مہیا کررہا ہے: امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ حال ہی میں بحر الاحمرمیں یمن کے حوثی باغیوں نے امریکا کے ایک جنگی جہاز کو جن میزائلوں سے نشانہ بنایا ہے وہ ایران کی طرف سے مہیا کیے گئے تھے اور ایران نے وہ میزائل چین سے خریدے تھے۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق امریکی فوج کے ایک عہدیدار نے بتایا کہ بحر الاحمر میں ہمارے ایک جنگی جہاز کو حوثی باغیوں نے ’سی 202 سلیک ورم‘ طرز کے میزائلوں سے نشانہ بنانے کی ناکام کوشش کی تھی۔ یہ میزائل ایران کی طرف سے حوثی باغیوں کو فراہم کیے گئے تھے جب کہ خود ایران نے چین سے یہ میزائل درآمد کیے تھے۔

امریکی فوج کا کہنا ہے کہ ایران نہ صرف یمن میں حکومت کے خلاف سرگرم شیعہ باغیوں کو اسلحہ فراہم کررہا ہے بلکہ وہ دنیا کے کئی دوسرے ملکوں کو بھاری جنگی ہتھیار مہیا کرتا ہے۔ یمن کے ساحلی علاقوں شبوۃ اور حضر موت میں حوثی باغیوں کو مہلک ہتھیار فراہم کرکے ایران نے عالمی سلامتی کونسل کی قراردادوں کی کھلی مخالفت کی ہے۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ ایران پر دوسرے ملکوں میں شورش پھیلانے کے لیے وہاں کی شیعہ ملیشیاؤں کو اسلحہ اور دیگر مالی، مادی اور عسکری امداد کی فراہمی کا الزام پہلی بار سامنے نہیں آیا۔ ایران کھلم کھلا لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ ، شام میں سرگرم کئی شیعہ دہشت گرد تنظیموں اور عراق کی الحشد الشعبی سمیت کئی گروپوں کو اسلحہ اور دیگر جنگی سامان مہیا کرتا ہے۔ یمن میں باغیوں کے زیراستعمال اسلحہ بھی ایران سے انہیں فراہم کیا جاتا ہے۔ جس میں اسکڈ میزائل، راکٹ اور راکٹ لانچر جیسے ہتھیار شامل ہیں.

عالمی ذرائع ابلاغ کےمطابق ایران چین، شمالی کوریا اور روس جیسے ملکوں سے اسلحہ خرید کران میں معمولی تبدیلیوں کے بعد انہیں ایرانی ماڈل قرار دے کر ایرانی ناموں سے فروخت کرتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں