.

"ایپل" کمپنی کا "صدام حسين" کے ساتھ معاملہ کرنے سے انکار !

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

معروف امریکی کمپنی "ایپل" نے ایک برطانوی صارف کو آئی فون کی واپسی کے بدلے اس کی قیمت (799 برطانوی پاؤنڈ) لوٹانے سے انکار کر دیا۔ کمپنی کا موقف ہے کہ پہلے یہ صارف ثابت کرے کہ وہ عراق کا سابق آمر صدام حسین (جو اس دنیا سے رخصت ہو چکا ہے) نہیں ہے۔

برمنگھم سے تعلق رکھنے والے 26 سالہ شہری شراکت حسین نے یہ آئی فون اپنی بہن کے لیے تحفے کے طور پر خریدا تھا تاہم اس کی بہن نے فون بدلنے کا مطالبہ کر دیا۔

امریکی کمپنی نے ابتدا میں کہا تھا کہ فون کی قیمت زیادہ ہے لہذا اسے بینک کے ذریعے منتقل کیا جائے گا تاہم کئی ہفتوں کے بعد بھی اس پر عمل نہیں کیا گیا۔

بعد ازاں شراکت حسین "ایپل" کمپنی کی ای میل کو دیکھ کر بھونچکا رہ گیا جس میں بتایا گیا تھا کہ وہ حکومت کی جانب سے پابندی میں شامل افراد میں سے ہے اور اس رُو سے اس کے ساتھ کسی بھی قسم کا لین دین یا معاملہ غیر قانونی ہوگا۔

شراکت حسین کے مطابق اسے اپنی آنکھوں پر یقین نہ آیا جب کمپنی کی جانب سے یہ مطالبہ کیا گیا کہ اس بات کا ثبوت پیش کیا جائے کہ وہ صدام حسین نہیں ہے جب کہ اس کا نام شراکت لکھنے اور بولنے میں صدام سے یکسر مختلف ہے۔

شراکت نے برطانوی اخبار "SUN" کو بتایا کہ "میں نے ابتدا میں گمان کیا کہ یہ حقیقی ای میل نہیں ہے تاہم تصدیق پر مجھے دھچکا سا لگا اور خود کو صدام حسین سے مربوط کیے جانے پر شدید غصہ آیا"۔