.

ٹرمپ کے طیارے کو صدارتی طیارے پر برتری حاصل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اس میں کوئی شک نہیں کہ امریکا کے ہر شخص کے لیے وہائٹ ہاؤس کے زیر انتظام فضائیہ کے طیارے ایئر فورس ون میں سفر ایک خواب کی حیثیت رکھتا ہے تاہم ڈونلڈ ٹرمپ ان میں شامل نہیں۔

اس کی وجہ ٹرمپ کا ذاتی طیارہ ہے جس سے صدارتی طیارے کا کوئی مقابلہ نہیں۔ جمعرات کی صبح ٹرمپ نے باراک اوباما سے ملاقات کی تو واشنگٹن جانے کے لیے انہوں نے روایات کو توڑتے ہوئے صدارتی طیارے کو آزمانے کے بجائے اپنے بوئنگ 757 میں ہی سفر کیا۔

مذکورہ اقدام نے اس حوالے سے سوالات کو جنم دیا ہے کہ آیا امریکا کے 45 ویں صدر اپنی پرتعیش زندگی کا سلسلہ اسی طرح جاری رکھیں گے۔

ٹرمپ کے طیارے کی تاریخ

ڈونلڈ ٹرمپ نے اس منفرد طیارے کو 2011 میں خریدا تھا اور پھر اس کو ہر طریقے سے آرام دہ بنانے اور تمام تر سہولیات سے آراستہ کرنے کے لیے بے تحاشہ رقم خرچ کی۔

ڈسکوری چینل کی ایک دستاویزی فلم کے مطابق ٹرمپ اپنے طیارے کو "T-Bird"کے نام سے پکارنا پسند کرتے ہیں۔ اگرچہ انتخابی مہم میں ایک سے دوسری ریاست کے سفر کے دوران انہوں نے طیارے کو " ٹرمپ فورس ون" کا نام دے دیا۔

اس کی قیمت کا اندازہ 10 کروڑ ڈالر تک لگایا جاتا ہے۔ طیارے میں بنائے گئے دفتر ، دو بیڈ روم اور بیت الخلاء میں بعض تنصیبات خالص سونے کی ہیں۔ طیارے میں "رولس رائس" کمپنی کے طاقت ور ترین انجن نصب ہیں۔

طیارے کی نشستوں کی بیلٹوں پر 24 قیراط کے خالص سونے کا پانی چڑھا ہوا ہے جب کہ ٹرمپ کے خصوصی کمرے کے اندر لکڑی کے پینل اور ریشم کے تکیے موجود ہیں جن پر ٹرمپ خاندان کا لوگو نقش ہے۔

اس کے علاوہ ایک طیارے میں ایک فیملی تھیٹر بھی ہے جس میں 57 انچ کی اسکرین نصب ہے۔ اس کے ساتھ جدید ترین ساؤنڈ سسٹم اور تقریبا ایک ہزار فلموں پر مشتمل وڈیو لائبریری بھی ہے۔

صدارتی طیارے کو کس لحاظ سے فوقیت حاصل ؟

اس کے مقابلے میں صدارتی طیارے کی امتیازی خصوصیات پر نظر ڈالیں تو وہ حجم میں ٹرمپ کے طیارے سے بڑا ہے۔ صدارتی طیارے کے پروں کی لمبائی 59 میٹر جب کہ ٹرمپ کے طیارے کے پروں کی لمبائی 38 میٹر ہے۔

اسی طرح گنجائش کے لحاظ سے بھی صدارتی طیارے کو فوقیت حاصل ہے جس کے اندر 102 افراد کی گنجائش ہے جب کہ ٹرمپ کے طیارے میں صرف 43 افراد بیٹھ سکتے ہیں۔

صدارتی طیارے میں کانفرنس روم ، جمنازیم ، میزائل شکن نظام اور طبی دیکھ بھال کا خصوصی مرکز شامل ہے۔

صدارتی طیارہ ماحولیات کے لیے نقصان دہ ہے : ٹرمپ

اوباما نے صدارتی طیارے کو ہیلری کلنٹن کی انتخابی مہم میں خدمات کے لیے مختص کیا تھا۔ ٹرمپ اس حقیقت سے واقف ہیں اور انہوں نے ایک مرتبہ سوال کیا کہ " اوباما نے صدارتی طیارے کو ہیلری کلنٹن کی تشہیر کے لیے استعمال کی اجازت کیوں دی۔ اس کے اخراجات کون برداشت کر رہا ہے؟ "

اسی طرح انتخابی مہم کے دوران ایک مرتبہ ٹرمپ نے دعوی کیا کہ صدارتی طیارے کے "پرانے انجن" ہیں اور اس وجہ سے ان سے انسانی صحت کے لیے مضر کاربن کی بہت بڑی مقدار خارج ہوتی ہے۔

ٹرمپ نے کہا کہ " سب دیکھ لیں کہ اوباما کس طرح سے کاربن کے اخراج میں کمی کی باتیں کرتے ہیں.. اور پھر آ کر ہوائی کی فضاؤں میں اس طیارے کے ذریعے سفر کرتے ہیں جس کے برباد شدہ انجن اپنے منہ سے جہنم اگل رہے ہوتے ہیں"۔

ٹرمپ کے مطابق ماحولیات کے مفاد میں سوچنے والا ہر شخص اس طیارے کو نا پسند کرے گا۔