.

اسلامی تعاون تنظیم: مکہ پر میزائل حملہ دوبارہ زیر بحث آئے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کثیر الاشاعت عربی روزنامے 'الشرق الاوسط' کے مطابق مکہ مکرمہ پر یمنی باغیوں کی جانب سے بیلسٹک میزائل داغے جانے کے موضوع کو زیر بحث لانے کے لیے اسلامی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کے وزراء خارجہ کا ایک اور اجلاس جمعرات کے روز مکہ مکرمہ میں ہوگا۔ یاد رہے کہ دو ہفتے قبل اسی موضوع پر بات چیت کے لیے تنظیم کا پہلا اجلاس منعقد ہوا تھا۔

اسلامی تعاون تنظیم کی مجلس عاملہ نے گزشتہ ہفتے کے روز انتہائی سخت الفاظ میں حوثی اور معزول صدر علی عبداللہ صالح کی ملیشیاؤں اور 27 اکتوبر کو مکہ مکرمہ کو نشانہ بنانے کے لیے انہیں سپورٹ ، اسلحہ اور میزائل فراہم کرنے والوں کی مذمت کی۔ مجلس عاملہ نے اس کارروائی کو سعودی عرب میں مقامات مقدسہ کی حرمت پر حملہ اور دنیا بھر کے مسلمانوں کے جذبات کے لیے اشتعال انگیز قرار دیا۔ ساتھ ہی باور کرایا گیا کہ حوثیوں اور معزول صالح کو سپورٹ کرنے والے بھی مکہ مکرمہ پر حملے میں شریک ہیں۔

اسلامی ممالک کے وزراء خارجہ کا آئندہ اجلاس اسلامی تعاون تنظیم کی مجلس عاملہ کے اجلاس میں سامنے آنے والی ہدایت کے بعد منعقد کیا جا رہا ہے۔ اس کا مقصد اعلی ترین سیاسی سطح پر اس موضوع کو زیر بحث لانا اور ایک متحدہ موقف پر مبنی بیان جاری کرنا ہے۔ مجلس عاملہ کے اجلاس میں چار ممالک غیر حاضر تھے جن میں ایران بھی شامل ہے۔

اسلامی تعاون تنظیم کے گزشتہ اجلاس میں رکن ممالک نے دہشت گردی کا مقابلہ کرنے ، سعودی عرب کو نقصان پہنچانے اور وہاں موجود مقامات مقدسہ کو نشانہ بنانے کے خلاف مملکت کے لیے اپنی مکمل سپورٹ کا اعلان کیا۔