.

روسی گلوکار حادثے کا شکار طیارے میں سوار کیوں نہ ہوا ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حادثات جہاں اکثر لوگوں کے واسطے الم ناک اور درناک یادیں چھوڑ جاتے ہیں وہاں بعض لوگوں کے لیے مسرت کے احساس کا ذریعہ بھی بن جاتے ہیں۔ روسی فوج کے ایک گلوکار کے ساتھ بھی ایسا ہی معاملہ ہوا جس کو اتوار کی صبح بحر اسود میں گر کر تباہ ہونے والے روسی طیارے میں سوار ہونا تھا تاہم پاسپورٹ کی میعاد ختم ہونے کی وجہ سے اس کو سفر کی اجازت نہیں دی گئی۔ ابتدا میں سوچی کے فضائی حادثے میں مذکورہ گلوکار کی موت کا اعلان کیا گیا تھا تاہم بعد میں حکام نے واضح کیا کہ وہ زندہ ہے اور مسافروں میں شامل نہیں تھا۔

پاسپورٹ کے سبب سفر کرنے سے روک دیا گیا

موت کا شکار ہونے سے بچ جانے والے 29 سالہ گلوکار کا نام رومن ویلوٹوف ہے۔ ویلٹوف کے مطابق وہ ایئرپورٹ پر روانگی کے ہال میں موجود تھا تاہم جب وہ بورڈنگ پاس لینے کاؤنٹر پر گیا تو وہاں موجود خاتون اہل کار نے ویلٹوف کو یہ مژدہ سنایا کہ اس کا پاسپورٹ جولائی میں ختم ہو چکا ہے اور وہ سفر نہیں کر سکتا۔

ویلنٹوف کا کہنا ہے کہ "اگلی رات ساڑھے تین بجے سے لوگوں کے فون آنا شروع ہو گئے جو میرے زندہ ہونے کی تصدیق کر رہے تھے۔ میں نے مرنے والے افراد کی فہرست دیکھی تو حیران رہ گیا کہ اس میں میرا نام موجود تھا"۔

بیوی کے یہاں ولادت کے سبب سفر نہ کر سکا

بدقسمت طیارے میں سفر سے رہ جانے والے خوش قسمت افراد میں روسی فوج کے بینڈ میں انفرادی دُھن بجانے والا رکن ویڈم اینانیف بھی شامل ہے۔ ویڈیم کے یہاں حال ہی میں بچے کی پیدائش ہوئی ہے اور اس کی بیوی کا اصرار تھا کہ ویڈیم مدد کے لیے اس کے پاس ہی رہے۔ دونوں کے تین چھوٹے بچے ہیں۔ خوش قسمت شوہر کا کہنا ہے کہ جو کچھ ہواس پر یقین آنا بہت مشکل ہے۔

ابھی تک حادثے کا شکار افراد میں سے 20 لاشیں نکال لی گئی ہیں جب کہ بقیہ کی تلاش جاری ہے۔ حادثے کا منظرنامہ ابھی تک پراسرایت میں لپٹا ہوا ہے۔ روسی حکام دہشت گردی کے پہلو کو خارج از امکان نہیں قرار دے رہے جب کہ روسی سینیٹ میں دفاعی امور کی کمیٹی کے سربراہ ویکٹر اوزیروف کسی بھی دہشت گرد حملے کو قیاس سے باہر قرار دے چکے ہیں۔

دو منگیتروں نے ایک ساتھ موت کو گلے لگایا

روسی فوج کے مییوزیکل بینڈ "الیگزنڈروف" کے دو ارکان 22 سالہ رالینا گیلمانوفا اور اس کا منگیتر بھی حادثے میں موت کی نیند سوجانے والوں میں شامل ہیں۔ گزشتہ برس دونوں کی منگنی ہوئی تھی اور وہ جلد ہی رشتہ ازدواج میں منسلک ہونے والے تھے۔

رقاص شوہر اور بیوی ننھے بیٹے کو چھوڑ کر دنیا سے رخصت

فوجی میوزیکل گروپ میں شامل ایک رقاص جوڑا بھی حادثے میں ہلاک ہونے والوں میں شامل ہے۔ اولیگ اور اس کی بیوی ایکاترینا کورزانوفا نے اپنے پیچھے ایک چار سالہ بیٹا چھوڑا ہے۔

نیا بھرتی ہونے والا گلوکار

اسی طرح مرنے والوں میں عسکری میوزیکل گروپ کا 30 سالہ گلوکار الیکسینڈر چتکو بھی شامل ہے جس نے بحر اسود پر طیارے کے گرنے سے چند منٹ پہلے متعدد تصاویر لی تھیں۔

چتکو کی بہن کا کہنا ہے کہ وہ اپنے نئی ملازمت پر بہت خوش تھا اور وہ بہت خوب صورت آواز کا مالک تھا۔