.

لیبیا : بنغازی میں جنگجو لیڈر وسام بن حمید کی ہلاکت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی فوج کے ترجمان احمد المسماری نے دوسرے بڑے شہر بنغازی میں انقلابیوں کی شوریٰ کونسل کے رہ نما وسام بن حمید کی ہلاکت کی اطلاع دی ہے۔

ترجمان کے مطابق ایک زیر حراست جنگجو نزار الطيرہ نے تفتیش کے دوران یہ انکشاف کیا ہے کہ وسام بن حمید اٹھائیس روز قبل ایک فضائی حملے میں مارے گئے تھے۔

وہ بنغازی میں انقلابیوں کی شوریٰ کونسل کے سب سے نمایاں اور معروف رہ نما تھے۔وہ مقتول صدر معمر قذافی کے خلاف 2011ء کے اوائل میں مسلح عوامی بغاوت کے دوران سامنے آئے تھے اور وہ لیبیا میں اخوان المسلمون سے وابستہ ایک بٹالین کے کمانڈر بن گئے تھے۔انھوں نے افغانستان سے لوٹنے والے جنگجوؤں کو اپنی قیادت تلے جمع کر لیا تھا۔

ان اسلامی جنگجوؤں کی گذشتہ مہینوں کے دوران میں بنغازی اور اس کے نواحی علاقوں میں لیبیا کے سابق جنرل خلیفہ حفتر کی وفادار فوج کے ساتھ خونریز جھڑپیں ہوتی رہی تھیں۔ گذشتہ ماہ لیبیا کے مقامی میڈیا نے ایک ویڈیو جاری کی تھی جس میں وسام بن حمید ایک ٹینک کے سامنے کھڑے نظر آرہے تھے۔اس ٹینک پر داعش کا پرچم لہرا رہا تھا۔