.

خامنہ ای کا ’کارندہ خاص‘ رفسنجانی کا جانشین بنے گا؟

ابراہیمی رئیسی کو نیا سپریم لیڈر بنانے کی تیاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران میں سابق صدر اور مصالحتی کونسل کے چیئرمین علی اکبر ہاشمی رفسنجانی کی وفات کے بعد ان کے جانشین کے حوالے سے غیر سرکاری طور پر نام سامنے آنا شروع ہوگئے ہیں۔ اس ضمن میں ایک شدت پسند مبلغ اور سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے کارندہ خاص ابراہیمی رئیسی کا نام بھی لیا جا رہا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق 56 سالہ ابراہیم رئیسی سنہ 1988ء میں قائم کردہ اس ’ڈیتھ اسکواڈ‘ کے رکن رہ چکے ہیں جسے مجاھدین خلق اور دیگر تنظیموں سے وابستہ ہزاروں قیدیوں کو موت کے گھاٹ اتارنے کے لیے بانی انقلاب آیت اللہ علی خمینی کے حکم پر تشکیل دیا گیا تھا۔

مغربی ذرائع ابلاغ نے بھی ہاشمی رفسنجانی کے متوقع جانشین پر رپورٹس میں روشنی ڈالی ہے۔ برطانوی اخبار’گارجین‘ نے بھی آیت اللہ ابراہیمی رئیسی کو رفسنجانی کا مضبوط جانشین قرار دیا ہے۔ گارجین کی رپورٹ کے مطابق ابراہیم رئیسی کو نہ صرف سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی غیر مشروط حمایت حاصل ہے بلکہ وہ پاسداران انقلاب کے بھی پسندیدہ امیدوار ہیں۔

سپریم لیڈر کے حکم پر ابراہیم رئیسی کو تین اہم عہدوں پر فائز کیا جا چکا ہے۔ وہ ماہرین کونسل کے رکن ہیں، مذہبی عدالت کے ڈپٹی پراسیکیوٹر اور مشہد شہر کے اہم عہدیدار ہیں۔

ابراہیم رئیسی کا نام گذشتہ برس مارچ میں اس وقت سامنے آیا جب سپریم لیڈر نے انہیں امام الرضا کے مزار کی نگران ’قدس رضوی آستانہ’ فاؤنڈیشن کا چیئرمین مقرر کیا تھا۔اس سے قبل یہ عہدہ مذہبی رہ نما عباس واعظ طبسی کے پاس تھا جو 37 سال تک اس عہدے پر اپنی وفات تک فائز رہے۔

خیال رہے کہ آستانہ قدس رضوی فاؤنڈیشن ایران کا سب سے بڑا فلاحی اور خیراتی ادارہ ہے۔ جو ’بنیاد‘ فاؤنڈیشن کا حصہ سمجھی جاتی ہے۔ اس فاؤنڈیشن کے ذریعے ہونے والی آمد کل پیداوار کا 20 فی صد بتائی جاتی ہے۔

سپریم لیڈر کا متوقع جانشین

اخبار’گارجین‘ کے مطابق ابراہیم رئیسی نہ صرف ہاشمی رفسنجانی کے کی جگہ مصالحتی کونسل کے چییرمین کے مضبوط امیدوار ہیں بلکہ وہ آیت اللہ علی خامنہ ای کی جگہ سپریم لیڈر کے بھی امیدوار ہیں۔

ہاشمی رفسنجانی چار عشروں تک ریاست کے کلیدی عہدوں پر فائز رہے۔مگر ان کی وفات نے ایران میں طاقت کے مراکز میں ایک نیا ارتعاش پیدا کیا ہے۔ رفسنجانی کی وفات کے بعد یہ بحث ایک بار پھر زور پکڑ گئی ہے کہ ان کا جانشین کون ہوگا نیز سپریم لیڈر کا جانشین کون ہوسکتا ہے؟

سنہ 2014ء میں سپریم لیڈر کی سرجری کے بعد یہ قیاس آرائیاں کی جاتی رہی ہیں کہ موت کی صورت میں ایران کا نیا سپریم لیڈر کون ہوگا۔ تاہم کچھ عرصے بعد اس نوعیت کی بحث کو روک دیا گیا تھا۔ تاکہ اصلاح پسندوں کو اپنی مرضی کے نام پیش کرنے کی مہم سے روکا جاسکے۔

ایران میں رفسنجانی کے متوقع جانشین بنائے جانے کے لیے کچھ دیگر نام بھی زیر غور آسکتے ہیں۔ ان میں مرشد اعلیٰ کے صاحبزادے مجتبیٰ خامنہ ای، دولت مند آیت اللہ ھاشمی شاھرودی، جوڈیشل کونسل کے موجودہ سربراہ صادق لاری جانی اور موجودہ صدر حسن روحانی کے نام بھی شامل ہیں۔

ماضی میں ولی الفقیہ [سپریم لیڈر] کے متوقع جان نشینوں میں آیت اللہ جوادی آملی، آیت اللہ محمد تقی مصباح یزدی، آیت اللہ احمد جنتی اور دیگر نام شامل ہیں۔

ایرانی دستور کے مطابق فقیہ، عادل، پرہیز گار، بہادر، انتظامی اور سیاسی امور میں گہری بصیرت رکھنے والا سماجی اور طبی طور پر مکمل طور پر فٹ شخص ولی الفقیہ کا امیدوار بن سکتا ہے۔

اگرچہ دستور کی دفعہ 106 اور 107 میں واضح طورپر یہ بات موجود ہے کہ مرشد اعلیٰ کا انتخاب خبر گان کونسل کی جانب سے کیا جائے گا لیکن سیاسی نقشہ راہ سے ظاہر ہوتا ہے کہ نئے مرشد اعلیٰ کا انتخاب بنیاد پرست ایرانی مذہبی عناصر کے ہاتھ میں ہے۔