.

اقوام متحدہ ایلچی کی عدن آمد ، صدر منصور ہادی سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے لیے اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی اسماعیل ولد شیخ احمد سوموار کو جنوبی شہر عدن پہنچ گئے ہیں جہاں انھوں نے صدر عبد ربہ منصور ہادی سے ملاقات کی ہے اور ان سے تعطل کا شکار امن مذاکرات کی بحالی کے لیے تبادلہ خیال کیا ہے۔

یمنی حکومت کے ایک ذریعے نے بتایا ہے کہ اسماعیل ولد شیخ احمد کی اومان سے عدن آمد ہوئی ہے۔ان سے ملاقات میں یمنی وزیراعظم احمد عبید بن شقر اور وزیرخارجہ عبد الملک المخلافی بھی موجود تھے۔

عالمی ایلچی نے صدر منصور ہادی کی جانب سے ان کے امن فارمولے میں تجویز کردہ تبدیلیوں اور اس میں نیشنل ڈائیلاگ کے موقع پر ہونے والے سمجھوتوں کو شامل کرنے سے اتفاق کیا ہے۔

واضح رہے کہ 2013ء اور 2014ء میں یمنی بحران کے حل کے لیے مصالحتی کوششوں کے ضمن میں قومی عبوری مذاکرات کے عمل کو نیشنل ڈائیلاگ کا نام دیا گیا تھا اور اس دوران مختلف سمجھوتے طے پائے تھے۔

نیشنل ڈائیلاگ اقوام متحدہ اور خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) کی ثالثی میں طے شدہ سمجھوتے کا اہم حصہ تھا اور اسی کے تحت یمن کے ایک طویل عرصے تک صدر رہنے والے علی عبداللہ صالح نے اپنے نائب صدر عبد ربہ منصور ہادی کو عوامی احتجاجی تحریک کے بعد اقتدار حوالے کیا تھا۔

اسماعیل ولد شیخ احمد نے گذشتہ ہفتے یمن میں جاری بحران کے حل کے لیے پیش کردہ خلیجی امن منصوبے کی حمایت کرنے والے اٹھارہ ممالک پر مشتمل گروپ کے سفیروں سے جدہ میں خلیج تعاون کونسل کے جنرل سیکریٹریٹ میں ملاقات کی تھی اور ان سے یمن کی صورت حال اور امن مذاکرات کی بحالی سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کیا تھا۔

اس اجلاس کے بعد انھوں نے کہا تھا کہ اب وہ عدن میں صدر عبد ربہ منصور ہادی کی حکومت کے عہدہ داروں اور صنعا میں حوثی ملیشیا کے لیڈروں سے بات چیت کریں گے۔ پھر وہ نیویارک جائیں گے جہاں وہ 25 جنوری کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو یمن کی تازہ صورت حال اور بحران کے حل کے لیے اپنی کوششوں سے آگاہ کریں گے۔