.

عورت کا مصنوعی زخمی چہرہ دکھانے پر مراکشی ٹی وی کی سرزنش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مراکش کے ایک سرکاری ٹیلی ویژن اسٹیشن کی عورت کا مصنوعی طور پر زخمی، سوجھا ہوا چہرہ ، جھریاں اور داغ دھبے چھپانے کے لیے میک اپ کے طریقے دکھانے پر سرزنش کی گئی ہے۔

مراکشی ٹی وی اسٹیشن 2 ایم نے گذشتہ سال نومبر میں خواتین کے خلاف تشدد کے خاتمے کے عالمی دن کے موقع پر صبح کے وقت یہ پروگرام نشر کیا تھا۔

''صباحیات'' کے نام سے اس پروگرام میں ایک عورت دکھائی گئی تھی جس کا چہرہ سوجھا ہوا تھا۔پیش کار نے ناظرین کو یہ بتایا تھا کہ یہ عورت حقیقی طور پر زخمی نہیں ہے بلکہ یہ سینمائی اثرات ہیں۔

مراکش کی سمعی بصری مواصلات کی اعلیٰ اتھارٹی نے منگل کے روز قرار دیا ہے کہ اس پروگرام میں مختلف قانونی اور ریگولیٹری تصریحات کی خلاف ورزی کی گئی تھی۔

ادارے نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ خواتین کے خلاف براہ راست یا بالواسطہ تشدد کی شہ دینے یا ان کا تشخص مجروح کرنے کی بھی ممانعت ہے۔ اس پروگرام میں عورتوں کے خلاف تشدد سے نمٹنے کے لیے خود ساختہ حل پیش کیے گئے تھے اور یہ ایک طرح سے تشدد ہی کی حوصلہ افزائی تھی۔

یہ پروگرام جب اول اول نشر کیا گیا تھا تو اس کا کسی نے زیادہ نوٹس نہیں لیا تھا لیکن جب چینل نے اس کو اپنی ویب سائٹ پر پوسٹ کیا تھا تو اس کے خلاف سوشل میڈیا پر ایک واویلا مچ گیا تھا اور لوگوں نے اس کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔اس کے بعد چینل نے اس کو اپنی ویب سائٹ سے ہٹا دیا تھا۔

چینل کی انتظامیہ نے ایک بیان میں اس پروگرام کو مکمل طور پر نامناسب قرار دیا ہے اور اس موضوع کی حساسیت اور سنجیدگی کے پیش نظر اس غلطی پر ''مخلصانہ معذرت'' کر لی ہے۔