.

امریکی رکن کانگریس کا خفیہ دورۂ شام ،بشارالاسد سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی ایوان نمائندگان کی خاتون رکن نے حال ہی میں شام کا خفیہ دورہ کیا ہے اور وہاں دمشق میں صدر بشارالاسد سے ملاقات کی ہے اور ان سے ملک میں جاری جنگ کے خاتمے سے متعلق امور پر بات چیت کی ہے۔

ایوان نمائندگان کی ڈیموکریٹ رکن تلسی گیبارڈ اسی ماہ دمشق اور جنگ سے تباہ شدہ شمالی شہر حلب حقائق اکٹھا کرنے کے مشن پر گئی تھیں۔انھوں نے وہاں مہاجرین، شامی حزب اختلاف کے ارکان اور دونوں طرف سے لڑنے والے جنگجوؤں کے رشتے داروں سے ملاقاتیں کی تھیں۔

تلسی گیبارڈ نے بدھ کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ''میرا بشارالاسد سے ملنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا لیکن جب موقع ملا تو میں نے محسوس کیا کہ اس سے فائدہ اٹھایا جانا چاہیے۔ میرے خیال میں ہمیں ہر اس شخص سے ملاقات کے لیے تیار رہنا چاہیے جس سے اس جنگ کے خاتمے میں مدد مل سکتی ہو کیونکہ اس جنگ کی وجہ سے شامی عوام بہت زیادہ مصائب سے دوچار ہیں''۔

انھوں نے سی این این سے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ ''آپ صدر اسد کے بارے میں خواہ کچھ ہی سوچیں ،درحقیقت وہ شام کے صدر ہیں۔شام میں کسی بھی قابل عمل امن سمجھوتے تک پہنچنے کے لیے ان سے بات چیت کرنا ہوگی''۔

35 سالہ گیبارڈ ماضی میں ہوائی نیشنل گارڈ کی رکن رہ چکی ہیں اور وہ 2005ء میں عراق میں تعینات رہی تھیں۔انھوں نے صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے 8 نومبر کو ان کے انتخاب کے دو ہفتے کے بعد ملاقات کی تھی اور ان سے شام کے بارے میں تبادلہ خیال تھا جس سے اس امکان کو تقویت ملتی ہے کہ وہ شاید ان ہی کے کہنے پر شام کے خفیہ دورے پر گئی تھیں۔