.

داعش کا تیونسی رکن جرمنی میں حملے کی سازش پر گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جرمنی کے مغربی علاقے میں حکام نے مختلف مقامات پر چھاپا مار کارروائیاں کی ہیں اور ایک تیونسی شخص کو داعش کا بھرتی کنندہ ہونے کے الزام میں گرفتار کر لیا ہے۔ حکام نے جرمنی میں ایک اور حملے کے الزام میں بھی متعدد مشتبہ افراد کو گرفتار کیا ہے۔

فرینکفرٹ کے پراسیکیوٹرز کا کہنا ہے کہ بدھ کی صبح چوّن اپارٹمنٹوں ،کاروباری مراکز اور مساجد میں چھاپا مار کارروائیاں کی ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ سولہ مشتبہ افراد کے خلاف تحقیقات کی جارہی ہیں۔ان کی عمریں سولہ سے چھیالیس کے درمیان ہیں۔

چھتیس سالہ مرکزی مشتبہ ملزم کو فرینکفرٹ سے گرفتار کیا گیا ہے۔ اس کے بارے میں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ وہ داعش کا اگست 2015ء سے بھرتی کنندہ اور اسمگلر چلا آرہا ہے۔

جرمن پراسیکیوٹرز کا کہنا ہے کہ ایک ممکنہ حملے سے متعلق منصوبہ ابھی بالکل ابتدائی مراحل میں تھا اور انھوں نے کسی ٹھوس ہدف کا انتخاب نہیں کیا تھا۔