.

یمن: میدی اور اس کی بندرگاہ پر سرکاری فوج کا کنٹرول

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے صوبے حجہ میں مسلح افواج کے کمانڈر جنرل منصور الزافنی نے "العربيہ" سے خصوصی گفتگو میں بتایا ہے کہ سرکاری فوج نے میدی شہر کے جنوبی حصے کے سوا باقی تمام حصوں اور اس کی بندرگاہ پر مکمل کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔ انہوں نے باور کرایا کہ تمام عسکری کارروائیوں میں سعودی عرب کے زیر قیادت عرب اتحاد کی افواج کا تعاون حاصل ہے۔

ادھر یمنی فوج نے اتوار کی صبح ابین صوبے کے شمال مشرق میں عسکری کمک بھیجی جس میں فوج کے کئی بریگیڈز اور عوامی مزاحمت کاروں کی فورس کے جنگجو شامل ہیں۔ اس اقدام کا مقصد علاقے کو القاعدہ تنظیم کے عناصر سے پاک کرنا ہے جو پہاڑیوں کی جانب فرار ہو گئے تھے ۔

دوسری جانب انسداد دہشت گردی فورس کے خصوصی یونٹ نے جنوبی شہر عدن میں ایک خطرناک ترین دہشت گرد کو گرفتار کر لیا۔ "ابو دجانہ" کی عرفیت رکھنے والے مطلوبہ دہشت گرد کو عدن شہر کے شمالی علاقے المدارہ میں چھاپہ مار کارروائی کے دوران حراست میں لیا گیا۔ ابو دجانہ کا تعلق مبینہ طور پر یمن میں داعش تنظیم سے بتایا جاتا ہے۔ پولیس کے بیان کے مطابق ابو دجانہ نے پوچھ گچھ کے دوران عدن میں یمنی سکیورٹی فورسز، فوج اور عوامی مزاحمت کاروں کی قیادت میں شامل شخصیات کو ہلاک کرنے کے لیے کارروائیوں کا اعتراف کر لیا۔

ابین صوبے کے شہر لودر میں سکیورٹی ذرائع نے بتایا ہے کہ القاعدہ تنظیم کے مسلح افراد نے یمنی صدر کے دو ذاتی محافظین میں سے ایک کو اغوا کر لیا ہے۔ کرنل کا عہدہ رکھنے والے اس محافظ کو اس وقت اغوا کیا گیا جب وہ اپنے اہل خانہ کے ساتھ چھٹیاں گزار کر شہر سے نکل رہا تھا۔