.

دھمکیوں کی زبان استعمال کرنے والے شرمندگی اٹھائیں گے: روحانی

ایرانی انقلاب کی سالگرہ پر ٹرمپ اور نیتن یاھو کے پتلے نذرآتش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے صدر حسن روحانی نے کہا ہے کہ ایرانی عوام امریکا کو اس کی دھمکی آمیز زبان کے استعمال پر شرمندہ کریں گے۔ ان کا کہنا ہے کہ دھمکیوں کے ذریعے کمزور ممالک کو دبانے کا دور گذر گیا۔ ایرانی قوم امریکیوں کی دھمکیوں سےخوف زدہ نہیں ہوں گے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق صدرحسن روحانی نے ولایت فقیہ کے انقلاب کی 38 ویں سالگرہ کی مناسبت سے کل جمعہ کو تہران میں ایک عوامی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے صدر حسن روحانی نے کہا کہ ایرانی قوم کو احترام سے مخاطب کیا جائے۔ ایرانی قوم دھمکیوں کی زبان استعمال کرنے والوں کو جلد ہی شرمندہ کریں گے۔

صدر حسن روحانی کی جانب سے امریکا کے خلاف یہ بیان ایک ایسے وقت میں دیا ہے جب امریکا اور ایران کے درمیان کشیدگی عروج پر ہے۔ دونوں ملکوں میں کشیدگی پہلے سے چلی آ رہی ہیں مگر سخت گیر ری پبلیکن رہ نما ڈونلڈ ٹرمپ کے اقتدار سنبھالنے کے بعد تہران اور واشنگٹن میں تناؤ میں مزید اضافہ ہوا ہے۔

صدر حسن روحانی نے کہا کہ یہ لاکھوں کا مجمع وائیٹ ہاؤس کے جھوٹ اور دھمکیوں کو جواب دینے کے لیے جمع ہوا ہے۔

امریکا کے نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران اور چھ عالمی طاقتوں کے درمیان طے پائے جوہری معاہدے پر کڑی تنقید کی تھی۔ انہوں نے ایران کی جانب سے بیلسٹک میزائل تجربات پر تہران پر نئی پابندیاں عاید کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔ اس کے علاوہ صدر ٹرمپ نے کہا ہے کہ ایران کے خلاف فوجی کارروائی سمیت تمام آپشن کھلے ہیں۔

کل تہران میں انقلاب کی سالگرہ کی مناسبت سے منعقدہ عوامی اجتماع میں شرکاء نے امریکا مردہ باد اور اسرائیل مردہ باد کے نعرے لگائے۔ اس موقع پر نیتن یاھو اور ڈونلڈ ٹرمپ کے پوسٹر اور پتلے بھی نذرآتش کیے گئے۔