جنیوا بات چیت کے لیے وفد کی تشکیل پر شامی اپوزیشن منقسم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شامی میں سپریم مذاکراتی کمیٹی کی جانب سے جنیوا میں بات چیت کے لیے مذاکراتی وفد کی تشکیل نے اپوزیشن کی صفوں میں انقسام پیدا کر دیا ہے۔ ماسکو اور قاہرہ کے اجلاسوں میں شریک ہونے والے گروپوں نے اعلان کردہ تشکیل کو مسترد کرتے ہوئے ایک دوسری متوازن تشکیل کا مطالبہ کر ڈالا ہے۔

اپوزیشن فریقوں کی جانب سے نام لیے بغیر بیرونی قوتوں پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ وہ جنیوا بات چیت کے لیے مذاکراتی وفد کی تشکیل میں اپنا ایجنڈا مسلط کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

کچھ عرصہ قبل سعودی دارالحکومت ریاض میں شامی اپوزیشن کے فریقوں کے درمیان دو روز کی بات چیت کے بعد اس مذاکراتی وفد کی تشکیل پر اتفاق رائے ہو گیا تھا جو جنیوا 4 مذاکرات میں شرکت کرے گے۔

سپریم مذاکراتی کمیٹی کے بیان کے مطابق تشکیل کردہ وفد 21 ارکان پر مشتمل ہے۔ ان میں 9 شخصیات اپوزیشن اتحاد ، مذاکراتی کمیٹی اور آزاد ارکان میں سے ہیں۔ 10 ارکان کا تعلق عسکری گروپوں سے ہے۔ ان کے علاوہ قاہرہ اور ماسکو گروپ کا ایک ایک رکن بھی شامل ہے جو شام کے بحران کے پر امن سیاسی حل کی حمایت کرتے ہیں۔

وفد میں شامل سینئر مذاکرات کار محمد صبرا نے باور کرایا کہ وفد کی تشکیل میں تمام قوتوں کی متوازن اور منصفانہ نمائندگی کو یقینی بنایا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں