.

موٹاپے کا شکار مصری لڑکی بھارت میں نئے صدمے سے دوچار

ڈاکٹروں کا مریضہ کا وزن مزید 100 کلو گرام کم کرنے پرزور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حال ہی میں علاج کے لیے بھارت لائی گئی غیرمعمولی موٹاپے کا شکار مصری لڑکی بھارتی ڈاکٹروں کے طرز عمل سے ایک نئے صدمے سے دوچار ہوگئی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق بھارتی شہر ممئی کےایک مقامی اسپتال میں علاج کے لیے داخل کی گئی نصف ٹن وزنی لڑکی ایمان عبدالعاطی کو ڈاکٹروں نے اس وقت بری خبر سنائی کہ اس کا علاج اس وقت تک شروع نہیں کیا جاسکتا جب تک اس کا وزن 100 کلو گرام کم نہیں ہوگا۔

بھارتی ڈاکٹر جنہوں نے پہلے یہ دعویٰ کیا تھا کہ وہ 500 کلو وزنی مصری لڑکی کا علاج کرنے کی صلاحیت رکھتے نےاب بے بسی کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ ایمان عبدالعاطی کی موجودہ کیفیت میں اس کی سرجری نہیں کرسکتے۔ سرجری کے عمل کے لیے اسے ایک سو کلو گرام وزن کرنا ہوگا۔

اخبار’ہندستان ٹائمز‘ کے مطابق ایمان عبدالعاطی نے گذشتہ دو ماہ کے دوران ایک بھارتی ڈاکٹر کی نگرانی میں اپنا 30 کلو گرام وزن کم کیا ہے جب کہ اسے سرجری کے عمل کے قابل بنانے کے لیے مزید 100 کلو گرام وزن کم کرنا ہوگا۔

ایمان کے علاج پرمامور ڈاکٹر لکڈاؤلا کا کہنا ہے کہ مریضہ کے لیے اگلے 48 گھنٹے باعث تشویش ہیں۔ انہوں نے مریضہ کے کئی میڈیکل ٹیسٹ کئے ہیں۔ سب سے اہم ٹیسٹ اس کے 91 جینز کو موٹاپے کے جینز سے الگ کرنا ہے۔

خیال رہے کہ ایمان عبدالعاطی کو گذشتہ جمعہ کو خصوصی طیارےکے ذریعے مصر کے شہر اسکندریہ سے بھارتی شہر ممبئی لایا گیا تھا۔

"العربیہ ڈاٹ نیٹ" کے مطابق ایمان 1980 میں مصر کے اسکندریہ شہر میں پیدا ہوئی تو پیدائش کے وقت اس کا وزن 5 کلو گرام تھا۔ وہ بچپن سے ہی موٹاپے کا شکار تھی جس میں وقت کے ساتھ تیزی سے اضافہ ہوتا چلا گیا۔ اس دوران متعدد بڑے ڈاکٹروں کو معائنہ کرایا گیا جن کے مطابق ایمان ہارمون کے بہت بڑے بگاڑ سے دوچار تھی جس کے نتیجے میں اس کا وزن خوف ناک حد تک بڑھ گیا۔