.

سعودی وزیر خارجہ مشرقِ وسطیٰ کو درپیش چیلنجز سے نمٹنے کے لیے پُرامید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر نے کہا ہے کہ وہ مشرقِ وسطیٰ کو درپیش بہت سے چیلنجز پر قابو پانے کے بارے میں پُرامید ہیں اور صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کے ساتھ کام کرنے کے منتظر ہیں۔

ان سے سوال کیا گیا تھا کہ کیا انھیں ٹرمپ انتظامیہ کی جانب سے اسرائیلی ،فلسطینی تنازعے کے دو ریاستی حل سے دستبرداری پر تشویش لاحق ہے؟ اس پر انھوں نے کہا کہ ''ہم خطے کو درپیش تمام ایشوز پر ٹرمپ انتظامیہ کے ساتھ کام کے منتظر ہیں۔ ہم خطے میں درپیش بہت سے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے اپنی صلاحیت کے بارے میں بھی بہت خوش امید ہیں''۔

عادل الجبیر نے یہ بات جمعرات کو جرمن شہر بون میں امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسن کے ساتھ ملاقات کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ہے۔ٹیلرسن نئی امریکا انتظامیہ میں سیکریٹری آف اسٹیٹ (وزیر خارجہ ) کا عہدہ سنبھالنے کے بعد اپنے پہلے غیر ملکی دورے پر ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب امریکا کے ساتھ مختلف ایشوز پر کام کرنے کا منتظر ہے۔

ٹیلرسن نے صحافیوں کی موجودگی میں کوئی بیان نہیں دیا ہے۔انھوں نے اس موقع پر ایکسن موبائل کے سابق چیف ایگزیکٹو آفیسر کی حیثیت سے اپنی مصروفیات اور کاروباری سفروں کے حوالے سے ہلکے پھلکے انداز میں گفتگو کی ہے۔دونوں وزرائے خارجہ نے بون میں یمن میں جاری بحران کے خاتمے سے متعلق وزارتی اجلاس میں شرکت کی ہے۔