.

ترکی کی تاریخ میں پہلی مرتبہ، فوج میں حجاب کی اجازت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی میں سرکاری نیوز ایجنسی اناضول کے مطابق حکام نے بدھ کے روز فوج میں افسران کے عہدوں پر خدمات انجام دینے والی خواتین کے حجاب پہننے پر عائد پابندی ختم کر دی ہے۔ 1923 میں جمہوریہ ترکی کے قیام کے بعد یہ پہلا موقع ہے جب ترکی کی فوج میں شامل خواتین اہل کاروں کو حجاب کی اجازت دی گئی ہے۔ اس فیصلے کا اطلاق عسکری اداروں کی طالبات پر بھی ہوگا۔

اناضول ایجنسی نے وزارت دفاع کے حوالے سے بتایا ہے کہ "خواتین اپنی فوجی وردی کے ہی رنگ کا حجاب پہن سکتی ہیں تاہم چہرے کو ڈھانپنے کی اجازت نہیں ہو گی۔ اس فیصلے میں بالخصوص فضائیہ ، بحریہ اور زمینی فوج میں خدمات انجام دینے والی خواتین افسران اور عسکری اداروں کی طالبات شامل ہیں"۔

یہ فیصلہ سرکاری اخبار میں شائع ہونے کے بعد نافذ العمل ہوگا تاہم فی الفور یہ واضح نہیں کہ آیا اس فیصلے میں لڑائی کی مُہموں میں شریک خواتین اہل کار شامل ہوں گی یا نہیں۔

ترک وزارت دفاع نے گزشتہ نومبر میں فوج میں خدمات انجام دینے والی شہری اہل کاروں کو حجاب پہننے کی اجازت دے دی تھی۔ ایک ماہ قبل ترکی کی پولیس میں کام کرنے والی خواتین اہل کاروں کے حجاب پہننے پر پابندی کو بھی اٹھا لیا گیا تھا۔