.

ترک وزیراعظم کی آئینی ریفرینڈم کے حق میں ’’ہاں‘‘ مہم کا آغاز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک وزیراعظم بن علی یلدرم نے ملک میں صدارتی نظام کے نفاذ کے لیے مجوزہ آئینی ترامیم پر ہونے والے ریفرینڈم کے حق میں حکمراں جماعت کی باضابطہ ’’ہاں‘‘ مہم کا آغاز کر دیا ہے۔

بن علی نے ہفتے کے روز اس مہم کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ ’’مجوزہ نئے نظام کے نفاذ سے ایک مضبوط ترکی کی راہ ہموار ہوگی،وہ دہشت گردی کے خطرات کا مقابلہ کر سکے گا اور معیشت کو مزید مضبوط بنانے میں مدد ملے گی‘‘۔

انھوں نے کہا کہ ’’ ہم مستقبل میں ایک مضبوط ترکی کے لیے پہلا قدم اٹھا رہے ہیں‘‘۔ مجوزہ آئینی ترامیم کے نتیجے میں جدید ترکی میں پہلی مرتبہ ایک انتظامی صدارتی نظام رائج ہوگا۔واضح رہے کہ ان ترامیم کو متنازعہ اور دور رس نتائج کی حامل قرار دیا جارہا ہے۔

اس صدارتی نظام کے نفاذ کے بعد صدر کو وزراء کے تقرر اور انھیں برطرف کرنے کے اختیارات حاصل ہوجائیں گے۔جدید ترکی کی تاریخ میں پہلی مرتبہ وزیراعظم کا عہدہ ختم کردیا جائے گا اور اس کی جگہ ایک یا ایک سے زیادہ نائب صدور لیں گے۔ان دستوری ترامیم پر توقع ہے کہ اپریل میں عوامی ریفرینڈم کا انعقاد ہوگا اور عوام اپنا حق رائے دہی استعمال کرسکیں گے۔

ایک شخص نے ترک صدر رجب طیب ایردوآن کی تصویر والا بینر اٹھا رکھا ہے۔
ایک شخص نے ترک صدر رجب طیب ایردوآن کی تصویر والا بینر اٹھا رکھا ہے۔