.

ٹرمپ نے روایت توڑ دی ، وہائٹ ہاؤس رپورٹروں کے عشائیے کا بائیکاٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ہفتے کے روز اعلان کیا ہے کہ وہ 29 اپریل کو وہائٹ ہاؤس کے رپورٹروں کے سالانہ عشائیے میں شریک نہیں ہوں گے۔ سابقہ روایت کو توڑنے والے اس فیصلے کو صحافت کے ساتھ ٹرمپ کے ناخوش گوار تعلق کی ایک کڑی قرار دیا جا رہا ہے۔

امریکی صدر نے اپنی ٹوئیٹ میں لکھا کہ "میں رواں سال وہائٹ ہاؤس کی رپورٹر ایسوسی ایشن کے عشائیے میں شرکت نہیں کروں گا۔ میری خواہش ہے کہ آپ لوگوں کی وہ شام اچھی گزرے"۔

یہ بات معروف ہے کہ وہائٹ ہاؤس کی رپورٹر ایسوسی ایشن کا عشائیہ شور شرابے اور ہنگاموں سے بھرپور ہوتا ہے۔ اس موقع پر صحافی حضرات اور مشہور شخصیات امریکی صدر کے ساتھ جمع ہوتی ہیں.. اور تمام تر اختلافات کو ایک جانب رکھ دیا جاتا ہے تاکہ بنا کسی کینے اور منفی جذبے کے محفل میں ہنسی مذاق کی فضا پیدا ہو سکے۔

بعض تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ 2011 کے سالانہ عشائیے میں جب اُس وقت کے صدر باراک اوباما نے ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ مذاق کیا تھا تو وہ امریکی ارب پتی کی جانب سے وہائٹ ہاؤس میں صدارت کے لیے اپنی نامزدگی کے فیصلے کے حوالے سے اہم ترین لمحہ تھا۔

گزشتہ چند برسوں کے دوران یہ عشائیہ مشہور شخصیات کے لیے ایک پُرکشش ایونٹ بن چکا ہے جن میں جارج کلونی ، ہیلن میرین اور لنڈسی لوہین جیسے نام شامل ہیں۔

اگرچہ تمام سابق صدُور ہی صحافت کے ساتھ زبردست مباحثوں کا شکار رہے تاہم وہائٹ ہاؤس اور میڈیا کے درمیان تعلقات اس وقت ادنیٰ ترین سطح پر پہنچ چکے ہیں۔

ایک طرف ذرائع ابلاغ کے بعض اداروں نے ٹرمپ پر کئی معاملات میں "غلط بیانی" (جھوٹ) کا الزام عائد کیا.. تو دوسری طرف امریکی صدر نے میڈیا سے تعلق رکھنے والی شخصیات کو "زمین پر سب سے کم معتبر لوگ" قرار دیا۔