.

ٹرمپ انتظامیہ کا سعودی نائب ولی عہد سے ملاقات پر غور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا کی ٹرمپ انتظامیہ اسی ہفتے سعودی عرب کے نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان سے ایک سینیر عہدہ دار کی ملاقات کے اہتمام پر غور کررہی ہے۔

سی بی ایس نیوز نے اتوار کے روز یہ اطلاع ایسے وقت میں دی ہے جب امریکا نے یمن میں جنگجو تنظیم ’’جزیرہ نما عرب میں القاعدہ‘‘ کے خلاف اپنے فوجی مشن کو بڑھا دیا ہے۔وائٹ ہاؤس نے ابھی اس دورے کا اعلان نہیں کیا ہے۔ البتہ اس کا کہنا ہے کہ وہ اس کی تفصیل کی تصدیق کررہا ہے۔بعض اطلاعات کے مطابق وائٹ ہاؤس اس بات کا تعیّن کرنے کی کوشش کررہا ہے کہ سعودی نائب ولی عہد سے کون عہدہ دار ملاقات کرے گا۔

ٹرمپ انتظامیہ یمن میں جاری جنگ سے متعلق اپنی حکمت عملی پر نظرثانی کررہی ہے اور وہ جنگ زدہ ملک میں ایران کی مداخلت کے خاتمے کے لیے ایک سخت حکمت عملی اپنانے پر غور کررہی ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ قبل ازیں یمن میں القاعدہ کی شاخ کے خلاف ایک الگ فوجی مہم کو توسیع دینے کی حمایت کرچکے ہیں۔اس وقت امریکا کے بغیر پائیلٹ جاسوس طیارے یمن میں القاعدہ کے ٹھکانوں پر میزائل حملے کررہے ہیں اور گذشتہ ماہ امریکی کمانڈوز نے اس جنگجو گروپ سے وابستہ افراد کے خلاف ایک یمنی گاؤں میں چھاپا مار کارروائی کی تھی۔

یادرہے کہ سعودی نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان سے گذشتہ ماہ الریاض میں امریکا کی ری پبلکن پارٹی کے سرکردہ سینیٹر جان مکین نے ملاقات کی تھی۔انھوں نے امریکا اور سعودی عرب کے درمیان دو طرفہ تعلقات کا جائزہ لیا تھا اور انھیں مزید فروغ دینے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا تھا۔

سعودی نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان سے  الریاض میں امریکی سینیٹر جان مکین 21 فروری کو ملاقات کررہے ہیں۔ فائل تصویر
سعودی نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان سے الریاض میں امریکی سینیٹر جان مکین 21 فروری کو ملاقات کررہے ہیں۔ فائل تصویر