.

مصری نژاد ڈینا پاول امریکا کی قومی سلامتی کی نائب مشیر مقرر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا کے قومی سلامتی کےمشیر ایچ آر میکماسٹر نے مصری نژاد امریکی بنک کار ،پالیسی ساز اور ماہر اقتصادیات ڈینا پاول کو اپنی نائب مقرر کیا ہے۔

ٹرمپ انتظامیہ کے ایک سینیر عہدہ دار نے بتایا ہے کہ قومی سلامتی کی نائب مشیر کی بنیادی ذمے داری حکمت عملی وضع کرنا ہوگی۔توقع ہے کہ وہ فوج ،سفارتی شعبے اور انٹیلی جنس ایجنسیوں کے درمیان رابطہ کاری اور امریکا کی خارجہ پالیسی کے نفاذ کے لیے ایک وسیع تر کردار ادا کریں گی۔

میکماسٹر کو ریٹائرڈ جنرل مائیکل فلن کی جگہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے قومی سلامتی کا مشیر مقرر کیا تھا۔ان کے پیش رو کو ان انکشافات کے بعد اچانک اور جبری مستعفی ہونا پڑا تھا کہ انھوں نے واشنگٹن میں روسی سفیر سے اپنی ملاقاتوں کے بارے میں وائٹ ہاؤس کو اندھیرے میں رکھا تھا۔تاہم قومی سلامتی کونسل میں ان کے مقرر کردہ بہت سے عہدہ داروں کو نہیں ہٹایا گیا ہے ۔ان میں فاکس نیوز کی سابقہ تجزیہ کار اور قومی سلامتی کی نائب مشیر کے ٹی میکفارلینڈ بھی شامل ہیں۔

قومی سلامتی کے نائب مشیر کے عہدے کو امریکا کی خارجہ پالیسی کے حوالے سے اہم خیال کیا جاتا ہے اور تمام بڑے فیصلے ’’نائبین کی کمیٹی‘‘ ہی میں پہلے طے پاتے ہیں۔ پھر وہ وزرائے داخلہ اور خارجہ کی منظوری کے بعد حتمی شکل اختیار کرتے یا پالیسی اصول بنتے ہیں۔

ڈینا پاول ماضی میں گولڈمین سچز کی سابق شراکت دار رہی ہیں۔وہ امریکا کی معاون وزیر خارجہ بھی رہ چکی ہیں۔ وہ روانی سے عربی بول سکتی ہیں۔قبل ازیں وہ صدر ٹرمپ کی اقتصادی مشیر کے طور پر کام کررہی ہیں اور ٹرمپ انتظامیہ میں انھیں احترام کی نظر سے دیکھا جاتا ہے۔وہ ان چند ایک امریکی عہدہ داروں میں شامل تھیں جو صدر ٹرمپ کی منگل کے روز سعودی عرب کے نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان کے ساتھ ملاقات کے وقت موجود تھے۔