.

صدر ٹرمپ ایران مخالف اتحاد سے متعلق موقف واضح کریں گے: ٹیلرسن

دورے کا مقصد مشرقِ وسطیٰ کے ممالک کو داعش اور القاعدہ کے خلاف امریکی حمایت کا اعادہ کرنا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسن نے کہا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مشرقِ وسطیٰ کے آیندہ دورے کا مقصد خطے کے ممالک کو ایران کے خلاف اتحاد سے متعلق امریکا کے موقف سے آگاہ کرنا ہے۔

انھوں نے امریکی نیوز چینل این بی سی سے سوموار کے روز ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ ’’ میرے خیال میں مشرق وسطیٰ کے تمام ممالک ، تمام عرب اقوام اور دوسرے ممالک میں بھی ایران کی خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے والی سرگرمیوں کے بارے میں ایک وسیع تر اتفاق رائے پایا جاتا ہے‘‘۔

انھوں نے مزید کہا کہ صدر ٹرمپ کے اس دورے کا اہم پہلو ان مذاہب کے پیروکاروں کو داعش اور القاعدہ سے درپیش خطرات کے مقابلے کے لیے اتحاد کا پیغام دینا ہے۔

امریکی صدر آیندہ ہفتے سب سے پہلے سعودی عرب کا دورہ کریں گے ۔اس کے بعد وہ اسرائیل اور ویٹی کن میں مختصر قیام کریں گے۔ یہ ان کا پہلا غیر ملکی دورہ ہوگا۔ان کے سعودی عرب کے دورے کو مبصرین بڑی اہمیت دے رہے ہیں اور اس کو خطے کی سیاست میں امریکا کے کردار میں بڑی تبدیلی کا پیش خیمہ قرار دے رہے ہیں۔