.

ایران نے حوثیوں کو دھماکا خیز کشتیاں فراہم کیں: امریکی رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی انٹیلی جنس کی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ ایران نے یمن میں حوثیوں کو دھماکا خیز خودکش کشتیوں کی ٹکنالوجی فراہم کی۔ یہ بات اسلحے کے امور سے متعلق معروف امریکی جریدے IHS Janes کی ویب سائٹ پر بتائی گئی۔

پیر کے روز ویب سائٹ پر جاری رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکی انٹیلی جنس سمجھتی ہے کہ حوثیوں نے رواں سال 30 جنوری کو سعودی فرائیگیٹ پر حملے کے لیے دھماکا خیز مواد سے بھری ڈرون کشتی کا استعمال کیا تھا۔

امریکا میں نیشنل انٹیلی جنس کے ڈائریکٹر ڈینیئل کواٹس نے 11 مئی کو سینیٹ کی انتخابی کمیٹی کے سامنے یہ بیان دیا تھا کہ ایران یمن میں حوثی باغیوں کو "دھماکا خیز کشتی کی ٹکنالوجی" ، ڈرون طیارے اور بیلسٹک میزائلوں کی سپورٹ فراہم کر رہا ہے۔

سعودی سرحدی محافظین نے 26 اپریل کو ایک مرتبہ پھر حملہ آور کشتی کا راستہ روک لیا تھا جو ساحلی شہر جیزان کے نزدیک ایک پٹرول ٹرمینل کی جانب بڑھ رہی تھی۔

حوثیوں کی جانب سے ایک "خودکش" ڈرون طیارے کی نمائش کی جا چکی ہے جو ایرانی ساختہ ابابیل 2 طیارے سے ملتا جلتا ہے۔ رواں برس مارچ میں جاری ایک رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ متحدہ عرب امارات کی فوج نے عُمان کے راستے یمن اسمگل کیے جانے والے Qasef-1s ڈرون طیارے کو ضبط کر لیا تھا۔