.

ہماری دوستی یا انقلابیوں میں سے جرمنی کسی ایک کو چُن لے : ترکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کے وزیراعظم بن علی یلدرم نے منگل کے روز جرمنی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ انقرہ کے ساتھ دوستی یا باغیوں میں سے کسی ایک کو چُن لے۔ یہ اعلان برلن کی جانب سے بعض تُرک فوجی اہل کاروں کو سیاسی پناہ دیے جانے کے بعد سامنے آیا ہے۔ ان فوجیوں پر 2016 کے موسم گرما میں ہونے والی انقلاب کی ناکام کوشش سے تعلق کا الزام ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی کے مطابق یلدرم نے ایک ٹی وی خطاب میں کہا کہ "جرمنی پر لازم ہے کہ وہ کوئی ایک فیصلہ کر لے۔ اگر وہ ترکی کے ساتھ اپنے تعلقات کو بہتر بنانے کا ارادہ رکھتا ہے تو پھر اُس پر لازم ہے کہ اپنا رخ جمہوریہ ترکی کی طرف کرے نہ کہ امریکا میں مقیم مبلغ فتح اللہ گولن کے حامیوں کی طرف"۔

انقرہ حکومت گولن پر گزشتہ برس انقلاب کی کوشش کی منصوبہ بندی کا الزام عائد کرتی ہے۔