.

ایرانی صدارتی انتخابات آزادانہ اور منصفانہ نہیں:یورپی پارلیمنٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یورپی یونین کی پارلیمان نے ایران میں آج انیس مئی کو ہونے والے صدارتی انتخابات کو غیرمنصفانہ قرار دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یورپی پارلیمنٹ کے 156ء ارکان نے جمعرات کےروز اپنے ایک متفقہ بیان میں کہا کہ جمعہ کے روز ہونے والے ایرانی صدارتی انتخابات آزادانہ اور منصفانہ نہیں ہوں گے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ایرانی اپوزیشن کو صدارتی انتخابات میں آزادنہ طریقے سے حصہ لینے کا حق نہیں دیا گیا۔ صدارتی انتخابات میں حصہ لینے والے تمام امیداور ولایت فقیہ سے قلبی میلان رکھتےہیں۔ نیزایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ کی طرف سے قائم کردہ نام نہاد دستوری کونسل صدارتی امیدواروں کے کاغذات نامزدگی منظور یا مسترد کرنے کا اختیار رکھتی ہے۔ یہ دستوری کونسل خود غیر منتخب ادارہ ہے جو فرد واحد کا انتخاب ہے۔

پھانسیوں میں اضافے پر تشویش

یورپی یونین کی پارلیمان نے ایران میں اپوزیشن کارکنوں کو اندھا دھند دی جانے والی موت کی سزاؤں اور ان پرعمل درآمد پر بھی گہری تشویش کا اظہار کیا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ موجودہ ایرانی صدرحسن روحانی کے پہلے دور حکومت میں 3000 افراد کو پھانسی دی گئی۔

یورپی پارلیمان کے ارکان نے ایمنسٹی انٹرنیشنل کی اس رپورٹ کی طرف اشارہ کیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ ایران نے گذشتہ برس پھانسی کے سزا یافتہ 55 فی صد ملزمان کی سزاؤں پر عمل درآمد کرتے ہوئے انہیں موت کے گھاٹ اتار دیا تھا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ایران 18 سال سے کم عمر افراد کو پھانسی دینے والا دنیا کا پہلا ملک بن چکا ہے۔

یورپی ارکان پارلیمنٹ نے ایرانی رجیم کی جانب سے شام میں صدر بشارالاسد کے جرائم کی حمایت کی بھی شدید الفاظ میں مذمت کی ہےاور کہا ہے اسد رجیم اپنے شہریوں کے خلاف کیمیائی ہتھیاروں کا بے دریغ استعمال کررہا ہے اور تہران کی جانب سے اسدی جرائم کی پشت پناہی کی جاتی ہے۔