یمن : علی صالح کی جماعت کی حوثیوں کی مخلوط حکومت چھوڑنے کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن کے معزول صدر علی عبداللہ صالح کی جماعت جنرل پیپلز کانگریس نے صنعا میں حوثی باغیوں کی حکومت کے ساتھ تمام سمجھوتوں پر عمل در آمد نہ ہونے کی صورت میں اپنا ناتا توڑنے کی دھمکی دی ہے۔

العربیہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق پارٹی کے جنرل سیکریٹریٹ نے دونوں جماعتوں کے درمیان طے پائے تمام سمجھوتوں کے نفاذ کا مطالبہ کیا ہے۔اس نے انقلابی کمیٹیوں کو توڑنے اور تمام اداروں سے ان کے انخلاء کا مطالبہ کیا ہے اور کہا ہے کہ وہ اپنے زیر قبضہ تمام املاک اور چیزوں کو حوالے کردیں۔

پیپلز سیکریٹریٹ نے مزید کہا ہے کہ اگر ان مطالبات کو پورا نہیں کیا جاتا ہے تو وہ حوثیوں کے ساتھ اتحاد کو منسوخ کردے گی ۔اس کا کہنا ہے کہ انقلابی کمیٹیوں کی اداروں میں موجودگی کا مطلب ایک ہی جماعت کی بالا دستی ہے۔

دریں اثناء یمن کی قومی فوج نے تعز میں ایک فوجی کیمپ پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے اور وہاں سے حوثی اور صالح کی ملیشیائیں راہ فرار اختیار کر گئی ہیں۔یمن کی قانونی حکومت اور اس کی حامی مزاحمتی قوتوں نے عرب اتحاد کی مدد سے تعز میں جمہوری محل اور اس کے پاس پڑوس کے بہت سے علاقوں پر قبضہ کر لیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں