.

اماراتی سفیر کی ہیک ای میلز اور قطر کی خلیج میں کشیدگی بڑھانے کی کوششیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطری میڈیا نے اسی ہفتے متحدہ عرب امارات کے امریکا میں متعیّن سفیر یوسف العتیبہ کی مبینہ طور پر ہیک کی گئی ای میلز سے متعلق امریکی رپورٹس کی خوب تشہیر کی ہے۔

بعض عرب مبصرین نے العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے اس کو قطر کی جانب سے خطے میں کشیدگی بڑھانے کی ایک کوشش قرار دیا ہے جبکہ خلیجی ممالک میں پہلے ہی گذشتہ ہفتے امیر قطر شیخ تمیم کے بیانات کے بعد سے کشیدگی پیدا ہوچکی ہے۔

قطری میڈیا ذرائع نے اخبار ’’ دا انٹر سیپٹ‘‘ کے حوالے سے عتیبہ کے ای میل باکس کے ہیک ہونے کی اطلاع دی ہے اور کہا ہے کہ ہیکروں نے ہی ’’ دا انٹر سیپٹ ‘‘ ’’دا ہفنگٹن پوسٹ‘‘ اور ’’ ڈیلی بیسٹ ‘‘ کو ای میلز کا مواد فراہم کیا تھا۔اول الذکر دونوں اخباروں کے عربی ورژن کے لیے قطر فنڈ ز مہیا کرتا ہے۔

قطری میڈیا نے صرف دا انٹرسیپٹ کا اپنی رپورٹس میں حوالہ دیا ہے مگر دوسری دونوں ویب سائٹس کا ذکر نہیں کیا ہے۔

عتیبہ کی برقی مراسلت میں متحدہ عرب امارات کے قطر کے بارے میں معروف موقف کا انکشاف کیا گیا ہے اور کہا گیا ہے کہ قطر اپنے خلیجی ہمسایوں اور بالخصوص یو اے ای اور سعودی عرب کے ساتھ اقتدار کی کشمکش میں مبتلا ہے۔

ان ای میلز میں متحدہ عرب امارات کے حماس ، اخوان المسلمون اور قطر کے ان دونوں گروپوں کو اپنے آلہ کار کے طور پر استعمال کرنے کے حوالے سے معروف موقف ہی کو واضح کیا گیا ہے۔

بہت سے مبصرین کا خیال ہے کہ قطری میڈیا نے ان ہیک کی گئی ای میلز کو سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے درمیان تعلقات کو نقصان پہنچانے کے لیے شائع کیا ہے۔

قطری میڈیا کی رپورٹس میں اماراتی سفیر کے امریکا کی ایک لابی فاؤنڈیشن برائے دفاع جمہوریتیں کے ساتھ تعلقات کو توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا ہے۔اس نے اس لابی کے اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا ہے حالانکہ امریکا کے ایسے لابی گروپ روپے کی خاطر کسی کی طرف بھی ہوسکتے ہیں اور اس کی وکالت کر سکتے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ قطر نے تو خود 65 لابیوں کی خدمات حاصل کر رکھی ہیں۔ ان میں سے بیشتر اسرائیل کے لیے بھی کام کرتی ہیں اور وہ انھیں اپنے مفادات کے تحفظ کے لیے بھاری رقوم دیتا ہے۔

ان مبصرین کے بہ قول ا ن ای میلز سے ایسا کوئی اشارہ نہیں ملتا ہے کہ سعودی عرب کے خلاف کسی اماراتی سازش کا کوئی وجود ہے بلکہ ان ای میلز سے قطر سے ہمسایہ ممالک کی شکایات ہی کی تصدیق ہوتی ہے اور وہ یہ کہتے چلے آرہے ہیں کہ قطر خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کے لیے کردار ادا کررہا ہے۔