’عرب اقوام کی سلامتی کے لیے سعودی عرب، مصر یکجان‘

سعودی وزیرخارجہ کا دورہ مصر، سیاسی قیادت سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب کے وزیرخارجہ عادل الجبیر نے کہا ہے کہ ریاض میں ہونے والی اسلامی۔ امریکی سربراہ کانفرنس تاریخ سازپیش رفت ثابت ہوگی کیونکہ اس کانفرنس میں دہشت گردی کے خلاف مشترکہ جدو جہد جاری رکھنے اور دہشت گردوں کے سہولت کاروں کے خلاف مل کر کام کرنے سے متعلق کئی اہم فیصلے کیے گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی وزیرخارجہ نے ان خیالات کا اظہار اپنے دورہ مصر کے دوران مصری ہم منصب سامح شکری کے ہمراہ ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب میں کیا۔

انہوں نے کہا کہ عالم اسلام کی سیاسی قیادت کا سعودی عرب کی میزبانی میں انسداد دہشت گردی و انتہا پسندی مرکز کا قیام غیرمعمولی اہمیت کا حامل فیصلہ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ انتہا پسندی اور دہشت گردی سے مصر اور سعودی عرب دونوں متاثر ہیں اور دونوں برادر ملک انتہا پسندی سے نمٹںے کے لیے مل کر جدو جہد جاری رکھیں گے۔

عادل الجبیر کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں سعودی عرب اور مصر دونوں ایک صفحے پرہیں۔ دہشت گردی کی تمام انواع کے خلاف مشترکہ کارروائیاں جاری رکھنے کے ساتھ ساتھ دونوں ملک رواداری اورامن بقائے باہمی کے فروغ کے بھی مشترکہ کوششیں جاری رکھیں گے۔

اس موقع پر مصری وزیر خارجہ سامح شکری نے کہا کہ عرب مماک کی قومی سلامتی کو کسی بھی بیرونی مداخلت سے ہر صورت میں تحفظ فراہم کیا جانا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی وزیرخارجہ سے ملاقات کے دوران مشترکہ مفادات، باہمی تعاون کے حوالے سے طے پائے سمجھوتوں، عرب ممالک کی قومی سلامتی، بیرونی خطرات اور مداخلت، دہشت گردی اور انتہا پسندی سے نمٹنے کے لیے مشترکہ کوششوں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب اور مصر کا باہمی تعاون ہمہ جہت اور گہرا ہے۔ دونوں برادر ملک فوجی اور سیکیورٹی کی سطح پر ہم آہنگی پیدا کرنے اور عرب اقوام کے محفوظ مستقبل کے لیے مل کر جدو جہد جاری رکھیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں