دہشت گردی ، ایران نے جو بویا وہی کاٹ رہا ہے: ڈونلڈ ٹرمپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران کے دارالحکومت تہران میں بدھ کے روز دہشت گردوں کے حملے میں تیرہ افراد کی ہلاکت پر دکھ اور افسوس اور ایرانی قوم سے ہمدردی کا اظہار کیا ہے اور ساتھ ہی انھوں نے خبردار کیا ہے کہ اس ملک نے جو کچھ بویا تھا ،اب وہی کاٹ رہا ہے۔

امریکی صدر نے ایک مختصر بیان میں کہا کہ ’’ ہم ایران میں دہشت گردی کے حملوں میں بے گناہ شہریوں کی ہلاکتوں پر افسردہ ہیں اور ان کے لیے دعا گو ہیں۔ ہم ایرانی عوام کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہیں جو اس طرح کے مشکل حالات سے دوچار ہوئے ہیں‘‘۔

’’ہم اس بات پر زوردیتے ہیں کہ جو ریاستیں دہشت گردی کی پشتیبان ہیں ،وہ جس برائی کو پروان چڑھاتی رہی ہیں،اب اسی کا شکار ہوسکتی ہیں‘‘۔ انھوں نے مزید کہا ہے۔

قبل ازیں امریکی محکمہ خارجہ کی خاتون ترجمان ہیتھر نورت نے کہا تھا کہ ’’ایک پُرامن اور مہذب دنیا میں دہشت گردی کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔ہم ایران میں دہشت گردی کے حملوں کا شکار ہونے والے افراد اور ان کے خاندانوں سے افسوس کا اظہار کرتے ہیں اور ہماری دعائیں ایرانی عوام کے ساتھ ہیں‘‘۔

واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ گذشتہ سال صدارتی انتخاب کے لیے مہم کے دوران میں ایران پر دہشت گردی کی پشت پناہی کے الزامات عاید کرتے رہے تھے۔انھوں نے بار بار اس بات کا اعادہ کیا تھا کہ بر سر اقتدار آ کر جولائی 2015ء میں ایران کے عالمی طاقتوں کے ساتھ طے شدہ معاہدے کو ختم کرنا ان کی اولین ترجیح ہوگی۔

دریں اثناء ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے تہران میں دہشت گردی کے ردعمل میں بیان کو ناشائستہ قرار دیا ہے۔

جواد ظریف نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر لکھا ہے:’’ ایرانی قوم امریکی کلائنٹس کی حمایت یافتہ دہشت گرد ی کا مقابلہ کررہی ہے اور ایسے میں وائٹ ہاؤس کی جانب سے ناشائستہ اور ناخوشگوار بیانات جاری کیے جارہے ہیں‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں