.

شہزادہ محمد بن سلمان کی بہ طور ولی عہد بیعت عام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے شہریوں نے بدھ کی شام نماز تراویح کے بعد مکہ معظمہ میں قصر الصفا میں شہزادہ محمد بن سلمان کی بہ طور ولی عہد تقرری پر ان کی بیعت کی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق بعیت کی تقریب میں سعودی عرب کے سرکاری اداروں کے سینیر عہدیداروں، بیعت کمیٹی کے ارکان، مختلف شہروں کے گورنروں اور عام شہریوں نے شہزادہ محمد بن سلمان کے ہاتھ پر بیعت کی۔

شہزادہ محمد بن سلمان کی بیعت کے بعد سعودی عرب کے مفتی اعظم الشیخ عبدالعزیز آلالشیخ نے حاضرین مجلس سے خطاب کیا، اجتماع کی اہمیت پر روشنی ڈالی اور سعودی قیادت کے پیچھے سیسہ پلائی دیوار بن کر کھڑے ہونے کی ضرورت پر زور دیا۔

قبل ازیں مختلف شہروں کے گورنروں، قبائلی عمائدین اور دیگر سرکردہ شخصیات نے شہزادہ محمد بن سلمان کی بہ طور ولی عہد تقرری پر ان کی بیعت کی۔

خیال رہے کہ بدھ کو شہزادہ محمد کی ولی عہد کےعہدے پر تقرری کے بعد ملک کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے نماز تراویح کے بعد ولی عہد کی بیعت کی اپیل کی تھی۔

سبکدوش ہونے والے ولی عہد شہزادہ محمد بن نایف بن عبدالعزیز پہلے ہی شہزادہ محمد کے ہاتھ پر بیعت کرچکے تھے۔

سعودی پریس ایجنسی ’واس’ کے مطابق خادم الحرمین الشریفین نے ملک بھر کے گورنروں اور بیعت مراکز کے سربراہان کو الصفا محل میں پہنچ کر شہزادہ محمد بن سلمان کی بیعت کے احکامات صادر کیے تھے۔

دوسرے شہروں میں سفری صعوبت بچانے کے لیے خادم الحرمین الشریفین نے عام شہریوں کے لیے ہدایت کی ہے کہ وہ شہروں میں قائم بیعت مراکز میں مقامی گورنروں کے سامنے شہزادہ محمد بن سلمان کو ولی عہد مقرر کیے جانے کی بیعت کریں۔ ان کے لیے بیعت کی خاطر مکہ مکرمہ کا سفر ضروری نہیں۔ بیعت کونسل کے 34 میں سے31 ارکان نے شہزادہ محمد کو ولی عہد مقرر کئے جانے کے شاہی فیصلے کی توثیق کی تھی، جس کے بعد عام بیعت کا سلسلہ شروع ہوگیا تھا۔