دہشت گردوں کے لیے ایرانی سپورٹ سے مسائل کا تصفیہ پیچیدہ: امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اقوام متحدہ میں امریکی مندوب نکی ہیلی نے عالمی سلامتی کونسل کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ایران کے خلاف کسی بھی قسم کی کارروائی میں ناکام رہی ہے جس نے "کئی مرتبہ دانستہ طور پر" خود پر عائد پابندیوں کی خلاف ورزی کی۔
ہیلی کا کہنا ہے کہ " ہمیں ایران پر ظاہر کرنا ہوگا کہ اقوام متحدہ کے فیصلوں کے کے مقابل اس کے گھمنڈ اور نخوت سے کسی طوردرگزر نہیں کیا جائے گا"۔

امریکی مندوب کے مطابق ایرانی قُدس فورس کے کمانڈر قاسم سلیمانی کا بیرون ملک سفر اور ایران کے باہر اس کی موجودگی اقوام متحدہ کی قرار داد 2231 کی کھلی خلاف ورزی ہے۔ ہیلی نے کہا کہ ایران کا کردار عالمی برادری کے لیے خطے میں معلق تنازعات کے تصفیے کو پیچیدہ بنا رہا ہے۔


نکی ہیلی نے زور دے کر کہا کہ ایران کی جانب سے دہشت گرد گروپوں کی سپورٹ کا سلسلہ جاری ہے۔ تمام ممالک کو ہدایات دی جا چکی ہیں کہ قاسم سلیمانی کو اپنی سرزمین پر داخل نہ ہونے دیں۔ اس کے باوجود اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کی رپورٹ سے تصدیق ہوتی ہے کہ مذکورہ جنرل نے کئی مرتبہ شام اور عراق کا سفر کیا۔ یہ پیش رفت سلامتی کونسل کے اختیارات اور فیصلوں کو واضح طور پر چیلنج کرنے کے مترادف ہے"۔

جمعرات کے روز اقوام متحدہ میں ایران کے حوالے سے زیر بحث آنے والی رپورٹ پر تبصرہ کرتے ہوئے ہیلی کا کہنا تھا کہ " سکریٹری جنرل کی رپورٹ باور کراتی ہے کہ ایران کی جانب سے سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 کی خلاف ورزی کا ارتکاب کیا جا رہا ہے۔ لہذا سوال یہ ہے کہ سلامتی کونسل اس حوالے سے کیا کرے گی ؟"

اقوام متحدہ میں سیاسی امور کے ذمے دار جیفری فیلٹمین نے جمعرات کے روز سلامتی کونسل کو قرار داد 2231 میں موجود بقیہ پابندیوں پر عمل درامد کے حوالے سے اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل آنتونیو گوٹرس کی تیسری شش ماہی رپورٹ سے آگاہ کیا تھا۔

سلامی کونسل کے کسی رکن ملک نے ایران کے خلاف کسی بھی اقدام کی تجویز پیش نہیں کی۔
سفارت کاروں کا کہنا ہے کہ روس اور چین جن کے پاس ویٹو کا اختیار ہے وہ غالبا مزید اقدامات کو قبول نہیں کریں گے۔ روس نے تو جمعرات کے روز گوٹرس کی رپورٹ میں شامل بعض نتائج پر شکوک کا بھی اظہار کیا۔

اس دوران فیلٹمین نے رواں برس مارچ میں بحرِ ہند کے شمال میں فرانسیسی بحریہ کے ہاتھوں ہتھیاروں کے ضبط ہونے کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کو پورا یقین ہے کہ یہ ایرانی اسلحہ ہے اور اس کھیپ کو ایران سے روانہ کیا گیا۔ رپورٹ میں گوٹرس نے ایران سے مطالبہ کیا کہ وہ بیلسٹک میزائل کے تجربات سے گریز کرے جن سے کشیدگی اور تناؤ میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں