امریکی ایوان نمائندگان میں ایران اور روس کے خلاف نئی پابندیاں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی ایوانِ نمائندگان نے ایران، روس اور شمالی کوریا نئی پابندیاں لگانے کے حق میں ووٹ دیا ہے۔

سنہ 2016 کے امریکی صدارتی انتخاب میں مبینہ طور پر روس کی مداخلت کی وجہ سے سینیئر حکام اس کے ردعمل میں نشانہ بنیں گے۔

یاد رہے کہ دو روز قبل امریکی کانگریس میں دونوں جماعتوں کے رہنما صدارتی انتخاب میں روس کی مبینہ مداخلت پر اس کے خلاف نئی پابندیاں عائد کرنے کے لیے قانون سازی پر رضامند ہوئے تھے۔

ایوان نمائندگان میں ہونے والی رائے شماری میں 98 ارکان نے ایران اور روس پر پابندیوں کی حمایت اور صرف دو ارکان نے مخالفت میں رائے دی

وائٹ ہاؤس کا کہنا ہے کہ ابھی صدر ٹرمپ نے فیصلہ نہیں کیا کہ وہ اس بل کو ویٹو کریں گے یا نہیں۔

روس کی امریکی انتخاب میں مبینہ مداخلت کے معاملے میں تحقیقات جاری ہیں اور اسی تناظر میں امریکی صدر نے ملک کے اٹارنی جنرل جیف سیشنز پر دباؤ بھی بڑھا دیا ہے۔

صدر نے اپنے ایک بیان میں جیف کو ’کمزور‘ کہا اور یہ بھی کہا کہ وہ ان سے مایوس ہیں کیونکہ انھوں نے خود کو تحقیقات سے بچانے کا فیصلہ کیا۔

امریکی ایوان نمائندگان کی بھاری اکثریت نے ان اقدامات کی حمایت کی ہے جس کے ذریعے شمالی کوریا اور ایران پر بیلیسٹک میزائل کے تجربے کی وجہ سے پابندیاں عائد کی گئی ہیں۔

ان نئی پابنیوں کی وجہ سے روس کے تیل اور گیس کے پراجیکٹس پر اثر پڑے گا۔

جمعرات کو روسی صدر ولادی میر پوتن نے کہا تھا کہ ماسکو امریکی ایوان نمائندگان کی پابندیوں کے رد عمل میں ضروری اقدامات کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں