.

موگرینی ایران میں سیاسی قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کریں: ایمنسٹی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ’ایمنسٹی انٹرنیشنل‘ نے یورپی یونین کی انسانی حقوق ہائی کمشنر فیڈریکا موگرینی سے کہا ہے کہ وہ ایران کے دورے کے دوران وہاں پر سیاسی بنیادوں پر پابند سلاسل رہ نماؤں کی رہائی کا مطالبہ کریں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یورپی یونین کی انسانی حقوق ہائی کمشنر آج ہفتے کو تہران پہنچ رہی ہیں جہاں وہ پارلیمنٹ میں صدر حسن روحانی کی تقریب حلف برداری میں شرکت کریں گی۔

موگرینی کی ترجمان کیتھرین ری نے بتایا ہے کہ ایمنسٹی کی طرف سے زور دیا گیا ہے کہ مسز موگرینی ایران کے دورے کے دوران سیاسی قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کریں۔ ترجمان نے کہا کہ فیڈریکا موگرینی اپنے دورہ ایران کے دوران انسانی حقوق کی صورت حال پر بات کریں گی۔ وہ ایرانی پارلیمنٹ میں صدر حسن روحانی کے دوسری مرتبہ صدر منتخب ہونے پر حلف برداری کی تقریب میں شرکت کے ساتھ ساتھ ایرانی حکومت کے عہدیداروں سے بھی ملاقاتیں کریں گی۔ ان ملاقاتوں میں ایران کا متنازع جوہری پروگرام اور ایران میں انسانی حقوق کی صورت حال شامل ہوگی۔

ادھر ایمنسٹی انٹرنیشنل کے لندن میں قائم صدر دفتر سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ایران میں انسانی حقوق کی سنگین پامالیاں جاری ہیں۔ بیان میں یورپی یونین کی خاتون مندوب سے کہا گیا ہے کہ وہ ایران میں انسانی حقوق کی پامالیوں کا معاملہ اٹھائیں اور سیاسی قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کریں۔

تنظیم کی ایران سے متعلق امور کے ترجمان نسیم بایبانی نے کہا ہے کہ موگرینی دورہ ایران کے دوران زیرحراست انسانی حقوق کارکنان سے بھی ملاقات کریں گی، مگر وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ اس ملاقات کے بعد قیدیوں کو کوئی تکلیف نہیں پہنچائی جائے گی۔

گذشتہ بدھ کو ایمنسٹی انٹرنیشنل کی جانب سے جاری کردہ ایک رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ ایرانی جیلوں میں 45 سرکردہ سماجی اور انسانی حقوق کارکن پابند سلاسل ہیں۔ انہیں یورپی ملکوں اور عالمی تنظیموں سے روابط رکھنے کے الزام میں گرفتار کرکے 10 سال یا اس سے بھی زیادہ عرصے کے لیے قید کیا گیا ہے۔