.

متنازع ریاست کشمیر میں بھارتی فورسز کی کارروائیوں میں چار افراد شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارت کے زیر انتظام ریاست جموں وکشمیر میں تشدد کے واقعات میں ایک شہری اور تین حریت پسند شہید ہوگئے ہیں۔

ریاست کے انسپکٹر جنرل پولیس منیر احمد خان نے دعویٰ کیا ہے کہ پولیس اور فوجیوں نے ترال میں مسلح جنگجوؤ ں کی موجودگی کی اطلاع پر ایک رہائشی علاقے کا محاصرہ کر لیا تھا۔اس کارروائی کے دوران میں پولیس کو ایک مکان کے باہر تین حریت پسند ملے تھے اور انھیں فائرنگ کرکے ہلاک کردیا گیا ہے۔

انھوں نے صحافیوں کو بتایا ہے کہ’’ یہ تینوں مقامی جنگجو تھے‘‘۔ بھارتی فورسز کے ہاتھوں ان کے ماورائے عدالت قتل کی اطلاع ملتے ہی ترال کے نزدیک واقع علاقے میں مقامی لوگ سڑکوں پر نکل آئے اور انھوں نے بھارتی فورسز کے خلاف احتجاج شروع کردیا۔انھوں نے بھارت کے خلاف سخت نعرے بازی کی اور سکیورٹی اہلکاروں کی جانب پتھراؤ کیا۔

پولیس اہلکاروں نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پیلیٹ گولیاں چلائیں جس سے ایک کم سن لڑکا شدید زخمی ہوگیا اور وہ بعد میں اسپتال میں اپنے زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا ہے۔

واضح رہے کہ ترال حزب المجاہدین کے شہید کمانڈر برہان وانی کا آبائی قصبہ ہے اور گذشتہ سال جولائی میں بھارتی سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں ان کی شہادت کے بعد اس قصبے اور ریاست جموں وکشمیر کے دوسرے شہروں اور قصبوں میں کئی ماہ تک احتجاجی مظاہرے جاری رہے تھے۔

اس واقعے سے دوروز قبل ہی بھارتی فوجیوں نے لائن آف کنٹرول پر فائرنگ کرکے پانچ افراد کو موت کی نیند سلا دیا تھا اور ان کے بارے میں دعویٰ کیا تھا کہ انھوں نے پاکستان کے زیر انتظام آزادکشمیر کے سرحدی علاقے سے حد متارکہ جنگ عبور کر کے مقبوضہ کشمیر میں داخل ہو نے کی کوشش کی تھی۔