.

اتحاد کا حصہ رہنے کے باجود قطر کی عرب اتحاد پر الزام تراشی

اتحاد سے نکالے جانے پر دوحہ کی منافقانہ چال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں آئینی حکومت اور صدر عبد ربہ منصور ھادی کی حکومت کی رٹ بحال کرنے کے لیے سعودی عرب کی قیادت میں سرگرم عرب اتحاد کا حصہ رہنے کے باوجود قطر نے عرب اتحاد پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا الزام عاید کیا ہے۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق قطر کے سرکاری، نیم سرکاری اور نجی ذرائع ابلاغ ان دنوں عرب اتحاد کو بدنام کرنے کی مہم جاری رکھے ہوئے ہیں۔ ذرائع ابلاغ کے ذریعے عرب اتحاد پر یمن میں انسانی حقوق کی پامالیوں کا الزام عاید کیا جا رہا ہے، حالانکہ خود قطر بھی دو ماہ قبل تک اس اتحاد کا حصہ رہ چکا ہے۔

قطری ذرائع ابلاغ کی جانب سے نہ صرف جنگ اور اس کے منفی نتائج کی ذمہ داری عرب اتحاد پر تھوپنے کی مذموم کوشش کی ہے بلکہ یمن میں ہیضہ کی وباء پھیلنے کا قصور وار بھی عرب اتحاد کو ٹھہرایا ہے۔ اس ضمن میں قطری وزیر دفاع کا ایک بیان بھی سامنے آیا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ دوحہ کو یمن کے خلاف قائم کردہ عرب اتحاد میں شمولیت پر مجبور کیا گیا تھا۔

عرب عسکری اتحاد میں شمولیت اور عدم شمولیت کے حوالے سے قطری موقف اور پالیسیوں میں واضح تضاد پایا جا رہاہے۔ دو ماہ قبل تک دوحہ عرب اتحاد میں شمولیت پر فخر کا اظہار کرتا تھا مگر آج اسے اتحاد کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی بات یاد آگئی ہے۔